آئندہ 5برسوں میں دنیا میں1.5 ڈگری سے زائد گرمی بڑھنے کا امکان

محققین کے مطابق 2022سے 2026 کی مدت میں ریکارڈ سب سے گرم سال ہوگا۔ اس سے پہلے گزشتہ سات برسوں میں عالمی درجہ حرارت 2016 اور 2020 میں سب سے گرم برسوں کے ساتھ ایک ڈگری سیلسیس یا اس کے آس پاس رہا۔

لندن: گلوبل وارمنگ کے خطرات کے درمیان آئندہ پانچ برسوں میں دنیا بھر میں ڈیڑھ ڈگری سیلسیس سے زائد گرمی بڑھنے کا امکان ہے۔ برطانیہ کے محکمہ موسمیات نے پیشین گوئی کی ہے۔

بی بی سی نے عالمی موسمیاتی سائنس تنظیم(ڈبلیو ایم او) کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ درجہ حرارت میں اضافہ عارضی ہوسکتا ہے تاہم اس کا بڑھتا جانا باعث تشویش ہے۔ محققین کے مطابق 2022سے 2026 کی مدت میں ریکارڈ سب سے گرم سال ہوگا۔ اس سے پہلے گزشتہ سات برسوں میں عالمی درجہ حرارت 2016 اور 2020 میں سب سے گرم برسوں کے ساتھ ایک ڈگری سیلسیس یا اس کے آس پاس رہا۔

وہیں 2015 میں عالمی لیڈران نے پیرس سمجھوتے پر دستخط کیے تھے جو عالمی درجہ حرارت میں اضافہ کو دو ڈگری سیلسیس سے نیچے لانے اور اسے ڈیڑھ ڈگری سیلسیس کے نیچے رکھنے کی کوششوں کو جاری رکھنے کے لیے عزم کا اظہار کیا گیا تھا۔

تبصرہ کریں

Back to top button