اتراکھنڈ اور گوا میں پیر کو پولنگ

اتراکھنڈ کی 13اضلاع میں پھیلی 70 اسمبلی نشستوں کیلئے پیر کے دن ووٹ ڈالے جائیں گے۔81لاکھ رائے دہندے 632امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ کرنے والے ہیں۔

دہرہ دون: اتراکھنڈ کی 13اضلاع میں پھیلی 70 اسمبلی نشستوں کیلئے پیر کے دن ووٹ ڈالے جائیں گے۔81لاکھ رائے دہندے 632امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ کرنے والے ہیں۔ ان میں 152 آزاد امیدوار شامل ہیں۔ پولنگ صبح8بجے شروع ہوگی اور شام 6بجے اختتام کو پہنچے گی۔

سیاسی جماعتوں نے آن لائن اور فزیکل ریالیوں کے ذریعہ اور گھرگھر جاکر جارحانہ انتخابی مہم چلائی جو ہفتہ کی شام اختتام کو پہنچی۔ سال 2000ء میں بنی ریاست اتراکھنڈ میں یہ پانچواں اسمبلی الیکشن ہے۔

کل جن لوگوں کی سیاسی قسمت کا فیصلہ الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں بند ہوجائے گا ان میں چیف منسٹر پشکرسنگھ دھامی، ان کے کابینی ساتھی ستپال مہاراج، اروندپانڈے، دھن سنگھ راوت اور ریکھاآریہ کے علاوہ بی جے پی کے ریاستی صدر مدن کوشک نمایاں ہیں۔

کانگریس کے ممتاز چہروں میں سابق چیف منسٹر ہریش راوت، سابق وزیریشپال آریہ، صدرپردیش کانگریس گنیش گوڑیال اور چوتھی اسمبلی میں قائد اپوزیشن پریتم سنگھ شامل ہیں۔

بی جے پی کیلئے وزیراعظم مودی، وزیرداخلہ امیت شاہ، وزیردفاع راج ناتھ سنگھ، چیف منسٹر اترپردیش یوگی آدتیہ ناتھ نے مہم چلائی۔ جبکہ کانگریس کے لئے راہول گاندھی اور پرینکاگاندھی میدان میں اترے۔ چیف منسٹر دہلی اروندکجریوال اور ان کے نائب منیش سسوڈیا نے عام آدمی پارٹی کیلئے مہم چلائی۔

بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی نے بھی ریالیوں سے خطاب کیا۔ پچھلے اسمبلی الیکشن میں بی جے پی نے 70کے منجملہ 57نشستیں جیتی تھیں۔ کانگریس 11نشستوں تک محدود ہوگئی تھی۔ دوآزادامیدوار منتخب ہوئے تھے۔

روایتی طور پر اتراکھنڈ کی سیاست بڑی حد تک کانگریس اور بی جے پی کے درمیان گھومتی رہتی ہے لیکن اس بار عام آدمی پارٹی نے اتراکھنڈکا رخ کیا ہے۔ اس نے تمام 70حلقوں سے اپنے امیدوار کھڑے کردئیے۔

عام آدمی پارٹی نے کانگریس اور بی جے پی کی حکومتوں پر الزام عائد کیاکہ انہوں نے عوام کی امنگیں پوری نہیں کیں لہذا اس بار اسے ایک موقع دیاجائے۔ گوا میں کل 301 امیدواروں کی سیاسی قسمت کا فیصلہ ہوجائے گا جو 40اسمبلی حلقوں سے میدان میں ہیں۔ رائے دہی کی تمام تیاریاں مکمل ہوچکی ہیں۔

روایتی طور پر اس ساحلی ریاست میں دو جماعتوں میں مقابلہ ہوتا ہے لیکن اس بار ایسا نہیں ہے کیونکہ عام آدمی پارٹی اور ترنمول کانگریس کے علاوہ دیگر چھوٹی جماعتیں بھی اپنی قسمت آزمارہی ہیں۔ کووڈ کا پھیلاؤ روکنے رائے دہندوں کو پولنگ اسٹیشنس پر دستانے دئیے جائیں گے۔ خاتون رائے دہندوں کیلئے 100آل ویمن پولنگ بوتھس قائم کئے گئے ہیں۔

ساحلی ریاست میں 81 فلائنگ اسکواڈس متحرک رہیں گے۔ ممتاز امیدواروں میں چیف منسٹر پرمودساونت(بی جے پی)، قائداپوزیشن ڈگمبرکامت(کانگریس)، سابق چیف منسٹرس چرچل الیمو (ٹی ایم سی) روی نائک(بی جے پی)، لکشمی کانت پارسیکر (آزاد)‘سابق ڈپٹی چیف منسٹرس وجئے سردیسائی(جی ایف پی) اور سدین دھاولیکر(ایم جی پی) شامل ہیں۔

آنجہانی چیف منسٹر منوہرپاریکر کا لڑکا اتپل پاریکر اور عام آدمی پارٹی کا امیدوارچیف منسٹری امیت پالیکر بھی میدان میں ہیں۔ پیر کے دن 11لاکھ رائے دہندے ووٹ ڈالنے کے اہل ہیں۔ ووٹوں کی گنتی 10مارچ کو ہوگی۔

تبصرہ کریں

Back to top button