اتراکھنڈ کی دو ہندو بہنوں نے اپنی اراضی عیدگاہ کوعطیہ کردی

عیدگاہ کمیٹی کے حسین خان نے بتایاکہ دونوں بہنیں فرقہ وارانہ یکجہتی کی زندہ مثال ہیں اور کمیٹی اُن کی شکر گزار ہے۔ عنقریب اُنہیں تہنیت پیش کی جائے گی۔

کاشی پور: دو ہندو بہنوں نے اپنے آنجہانی والد کی آخری خواہش پوری کرتے ہوئے یہاں ایک عیدگاہ کو 4 بیگھہ زمین کا عطیہ دیا جس کی مالیت زائد از 1.5 کروڑ روپئے ہے۔ اُن کے اس خیر سگالی اقدام سے متاثر مسلمانوں نے عید کے موقع پر دونوں بہنوں کے آنجہانی والد کیلئے نماز پڑھی۔

 کاشی پور‘ اتراکھنڈ کے ضلع ادھم سنگھ نگر کا ایک چھوٹا ٹاؤن ہے اور ایک ایسے وقت ملک کے مختلف علاقوں سے فرقہ وارانہ کشیدگی کی اطلاعات موصول ہورہی ہیں، دونوں بہنوں کے اِس خیر سگالی اقدام کی زبردست ستائش کی جارہی ہے۔ براجندن پرساد رستوگی کا 20 سال پہلے دیہانت ہوا تھا اور انہوں نے اپنے قریبی رشتہ داروں کو بتایاتھا کہ وہ عیدگاہ کی توسیع کیلئے اپنی 4 بیگھہ اراضی کا عطیہ دینے کے خواہشمند ہیں۔

جنوری 2003 میں اُن کا دیہانت ہوگیا اور وہ اپنے بچوں کو اپنی آخری خواہش سے واقف نہیں کراسکے۔ اُن کی دونوں بیٹیوں سروج اور انیتا کو جو دہلی اور میرٹھ میں رہتی ہیں حال ہی میں اپنے رشتہ داروں سے اپنے والد کی آخری خواہش کا پتہ چلا۔ اُنہوں نے فوری اپنے بھائی راکیش رستوگی سے ربط پیدا کیا جو کاشی پور میں رہتے ہیں اور اُن کی اجازت مانگی۔

 راکیش بھی فوری تیار ہوگئے۔ اُن سے ربط پیدا کرنے پر اُنہوں نے بتایاکہ والد کی آخری خواہش کا احترام کرنا ہمارا فرض ہے۔ میری بہنوں نے ایسا کام کیا ہے جس سے اُن کی آتما کو شانتی ملے گی۔ عیدگاہ کمیٹی کے حسین خان نے بتایاکہ دونوں بہنیں فرقہ وارانہ یکجہتی کی زندہ مثال ہیں اور کمیٹی اُن کی شکر گزار ہے۔ عنقریب اُنہیں تہنیت پیش کی جائے گی۔

تبصرہ کریں

Back to top button