امیت شاہ کی تقریر جھوٹ کا پلندہ: ہریش راؤ

حکمراں جماعت تلنگانہ راشٹرا سمیتی (ٹی آر ایس) نے مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کی تقریر کو، جنہوں نے حیدرآباد کے قریب ایک جلسہ عام میں کی تھی، جھوٹ کا پلندہ قرار دیا۔

حیدرآباد: حکمراں جماعت تلنگانہ راشٹرا سمیتی (ٹی آر ایس) نے مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کی تقریر کو، جنہوں نے حیدرآباد کے قریب ایک جلسہ عام میں کی تھی، جھوٹ کا پلندہ قرار دیا۔

ریاستی وزیر فینانس ٹی ہریش راؤ، وزیر افزیش مویشیان ٹی سرینواس یادو، اور وزیر آر اینڈ بی پرشانت ریڈی نے اتوار کے روز کہا کہ امیت شاہ نے تکو گوڑہ کے مقام پر ہفتہ کو منعقدہ جلسہ عام میں کھلا جھوٹ بولا ہے۔

شاہ کی تقریر کو حقائق سے بعید قرار دیتے ہوئے ہریش راؤ نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی قائد نے کذب بیانی سے تلنگانہ عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کی ہے۔ وزیر فینانس نے مرکزی وزیر داخلہ کو ”جھوٹوں کے شاہ“ سے تعبیر کیا اور بی جے پی کو بڑی جھوٹی پارٹی قرار دیا۔

ہریش راؤ نے چیالنج کرتے ہوئے شاہ سے پوچھا کہ ہمت ہے تو یہ بتائیں کہ مرکز نے مشن بھاگیرتا کو کتنا فنڈ جاری کیا ہے۔ ریاستی وزیر فینانس ٹی ہریش راؤ نے کہا کہ مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کی تقریرجھوٹ کا پلندہ تھی۔

آج یہاں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے ریاستی بی جے پی قائدین کو چیالنج کیا کہ اگر ان میں اخلاق اور ہمت ہے تو عوام کو امیت شاہ کی جھوٹ پر جواب دیں۔ ہریش راؤ نے کہا کہ امیت شاہ نے ٹی آر ایس پر الزام عائد کیا کہ مجلس اتحادالمسلمین کے ڈر سے آرٹیکل370 کی برخواستگی کی تائید نہیں کی گئی۔

ان کے اس بیان سے محسوس ہوتا ہے کہ مرکزی وزیر داخلہ بھولنے کی بیماری میں مبتلا ہیں۔ انہیں یہ بھی نہیں معلوم کہ ٹی آر ایس نے آرٹیکل370 کی برخواستگی کی کھل کر تائید کی تھی۔ امیت شاہ نے مشن بھاگیرتا کیلئے مرکزی حکومت کی طرف سے تلنگانہ کو2500 کروڑ دئیے جانے کی بات کہی جو سراسر جھوٹ ہے۔

مرکزی حکومت نے اس اسکیم کیلئے ریاست کو2 روپے بھی جاری نہیں کئے، اگر کئے ہیں تو ثبوت پیش کرے۔ ہریش راؤ نے کہا کہ حکومت تلنگانہ کی جانب سے مشن بھاگیر تا پر35,200 کروڑ خرچ کرتے ہوئے ریاست کو فلورائیڈ مسئلہ سے پاک کردیا گیا۔

امیت شاہ نے تیسری جھوٹ بولتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ میں آیوشمان بھارت اسکیم پر عمل نہیں کیا جارہا ہے جبکہ مرکزی وزیر نے پارلیمنٹ میں اعلان کیا تھا کہ آیوشمان بھارت اسکیم پر تلنگانہ اتم کمار ریڈی نے پارلیمنٹ میں سوال کیا تھا کہ کیا آیوشمان بھارت، اسکیم پر تلنگانہ میں عمل کیا جارہا ہے؟ اس کا جواب دیتے ہوئے مرکزی وزیر صحت نے ہاں! میں جواب دیا تھا۔ 21مئی 2021 سے تلنگانہ میں آیوشمان بھارت اسکیم پر عمل کیا جارہا ہے۔

اگر اس اسکیم پر تلنگانہ میں عمل نہیں کیا جارہا ہے تو مرکزی حکومت نے تلنگانہ کو150 کروڑ روپے کیوں جاری کئے۔ ہریش راؤ نے کہا کہ امیت شاہ کا چوتھا جھوٹ ریاست میں سوپر اسپیشالیٹی ہاسپٹلس کی عدم تعمیر سے متعلق ہے جبکہ حیدرآباد، کے چاروں سمت سوپر اسپیشالیٹی ہاسپٹلس کے قیام کا فیصلہ لیا گیا ہے، پہلے ہی سے گچی باؤلی میں ٹمس ہاسپٹل کا م کررہا ہے۔

مزید تین دواخانوں کی تعمیر کیلئے حالیہ عرصہ میں سنگ بنیاد رکھا گیا تھا۔ انہوں نے مرکزی حکومت پر تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں مرکزی حکومت نے 157 میڈیکل کالجس منظور کئے مگر اس میں تلنگانہ کو نظر انداز کردیا گیا۔ اس کے باوجود ہم نے تمام33اضلاع میں 33میڈیکل کالجس قائم کرنے کا فیصلہ لیا اور کئی مقامات پر کالج کی عمارتوں کے تعمیراتی کام جاری ہیں۔

وزیرفینانس نے کہا کہ امیت شاہ کا پانچواں جھوٹ منااورو منا بڈی پروگرام کو سروا سکھشا ابھیان کا حصہ قرار دینا ہے۔ ہریش راؤ نے کہا کہ منا اورومنا بڈی پروگرام پر ریاستی حکومت کی جانب سے7,300 کروڑ روپے خرچ کئے جارہے ہیں اور مرکزی حکومت سرواسکھشا ابھیان کے تحت ریاست کو صرف300 کروڑ روپے جاری کرتی ہے۔

انہوں نے امیت شاہ سے جاننا چاہا کہ کیا آپ کو منا اورو منا بڈی پروگرام کا مقصد معلوم ہے؟ اور اگر ہے تو اس پروگرام پر بی جے پی زیر حکومت کی کتنی ریاستوں میں عمل کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے جلسہ میں دو مرکزی وزراء نے الگ الگ اعداد و شمار بتاتے ہوئے اپنے جھوٹ کا خود پردہ فاش کردیا۔

مرکز وزیر جی کشن ریڈی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ راست فنڈنگ کے نام پر ریاست کو30,000 کروڑ روپے دئیے گئے اور ان کی تقریر کے محض آدھے گھنٹہ بعد امیت شاہ نے کہا کہ تلنگانہ کو 18,000 کروڑ روپے دئیے گئے۔ہریش راؤ نے بی جے پی قائدین سے جاننا چاہا کہ کشن ریڈی اور امیت شاہ میں کون سچ بول رہا ہے۔

انہوں نے بی جے پی قیادت کو ان جھوٹے بیانات پر وضاحت کرنے کا مطالبہ کیا۔دوسری طرف ریاستی وزیر افزائش مویشیاں و سمکیات ٹی سرینواس یادو نے گذشتہ روز امیت شاہ کی تقریر کو افسوسناک قراردیتے ہوئے کہا کہ مرکزی وزارت داخلہ کے عہدے پر فائض شخص کو زیب نہیں دیتا کہ وہ دروغ گوئی کریں۔

انہوں نے بی جے پی کو چیالنج کرتے ہوئے کہا کہ اگر ان میں ہمت ہے تو مرکزی حکومت کو تحلیل کرتے ہوئے عام انتخابات کا سامنا کرے۔ انہوں نے کہا کہ اقتدار کے نشہ میں من مانی بیانات دینا عقل مندی نہیں ہے۔ امیت شاہ کو جھوٹ بولنے سے پہلے اپنے رتبہ کا خیال کرنا چاہئے تھا۔

انہوں نے کہا کہ ریاست بھر میں غریب عوام کے سروں پر چھت فراہم کرنے ڈبل بیڈروم مکانات تعمیر کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے امیت شاہ سے جاننا چاہا کہ کیا گجرات میں بھی ڈبل بیڈروم مکانات تعمیر کئے گئے؟۔ امیت شاہ کے دورے تلنگانہ کے بعد بی جے پی اور ٹی آر ایس قائدین کے درمیان لفظی جنگ چھڑ گئی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button