اورنگ آباد اورعثمان آباد کا نام تبدیل کرنے حکومت مہاراشٹرا کا فیصلہ

کابینہ کے ایک وزیر نے زور دے کر کہا کہ اجلاس میں کوئی سیاسی تبادلہ خیال نہیں ہوا۔ اجلاس کے بعد صحافیوں سے وزیر ٹرانسپورٹ اور شیوسینا لیڈر انل پرب نے کہا کہ انہوں نے مطالبہ کیا کہ اورنگ آباد شہر کا نام بدل کر سمبھاجی نگر کردیا جائے۔

ممبئی: شیوسینا کی زیر قیادت حکومت مہاراشٹرا نے آج اورنگ آباد کا نام تبدیل کرتے ہوئے سمبھاجی نگر اور عثمان آباد کا نام دھارا شیو رکھنے کی تجویز کو منظوری دے دی ہے۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ شیوسینا اپنی ہندوتوا ساکھ کو بحال کرنے کی کوشش کررہی ہے۔

31 ماہ قدیم مہاراشٹرا وکاس اگھاڑی حکومت کا یہ آخری بڑا فیصلہ ہوسکتا ہے۔ دونوں شہروں کا نام تبدیل کرنے شیوسینا کا یہ فیصلہ ایک ایسے وقت آیا ہے جب وہ ایک سنگین سیاسی بحران کا سامنا کررہی ہے۔ قبل ازیں موصولہ اطلاع کے بموجب  پارٹی میں بغاوت کے بعد اپنی حکومت کے لیے خطرے کا سامنا کررہے مہاراشٹرا کے چیف منسٹر ادھو ٹھاکرے نے منگل کو کابینی اجلاس کی صدارت کی جس میں اورنگ آباد شہر کا نام سمبھاجی نگر کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔

 بغاوت کرنے والے اور گوہاٹی میں خیمہ زن شیوسینا کے باغی وزراء کے قلمدانوں کو واپس لینے کے ایک دن بعد جنوبی ممبئی میں واقع ریاستی سکریٹریٹ میں کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں ٹھاکرے نے آن لائن شرکت کی۔ ٹھاکرے چیف منسٹر کی قیام گاہ چھوڑ کر اب نجی رہائش گاہ ماتوشری میں مقیم ہیں۔

 کابینہ کے ایک وزیر نے زور دے کر کہا کہ اجلاس میں کوئی سیاسی تبادلہ خیال نہیں ہوا۔ اجلاس کے بعد صحافیوں سے وزیر ٹرانسپورٹ اور شیوسینا لیڈر انل پرب نے کہا کہ انہوں نے مطالبہ کیا کہ اورنگ آباد شہر کا نام بدل کر سمبھاجی نگر کردیا جائے۔

ٹھاکرے کے قریبی معاون پرب نے کہا کہ ”کل کے اجلاس میں ایک تجویز پیش کی جائے گی۔“ کانگریس لیڈر اور ریاستی وزیر اسلم شیخ نے کہا کہ کچھ اضلاع میں بڑھتے کووڈ کیسس اور انہیں روکنے کے لیے کیے گئے اقدامات پر تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں بارش کی کمی پر  بھی تبادلہ خیال ہوا۔

تبصرہ کریں

Back to top button