اورنگ زیب کے مقبرہ کی سیکوریٹی بڑھادی گئی

ایم این ایس کے ترجمان گجانن کالے نے ٹوئٹ کرکے تعجب کا اظہار کیا کہ مہاراشٹرا میں اورنگ زیب کے مقبرہ کی ضرورت کیا ہے، اسے مسمار کردینا چاہیے تا کہ لوگ وہاں نہ جاسکیں۔

اورنگ آباد: محکمہ آثار قدیمہ کے عہدیدار نے کہا کہ ایم این ایس لیڈر کی جانب سے مغل شہنشاہ اورنگ زیب کے مقبرہ کو مسمار کرنے کی ضرورت ظاہر کرنے کے بعد حکام نے یادگار پر سیکوریٹی میں اضافہ کردیا۔  واضح رہے کہ مجلس کے لیڈر اکبر الدین اویسی کی حال ہی میں مقبرہ کی زیارت پر ریاست کی حکمراں شیوسینا کے علاوہ راج ٹھاکرے کی ایم این ایس نے بھی تنقید کی تھی۔

 منگل کو ایم این ایس کے ترجمان گجانن کالے نے ٹوئٹ کرکے تعجب کا اظہار کیا کہ مہاراشٹرا میں اورنگ زیب کے مقبرہ کی ضرورت کیا ہے، اسے مسمار کردینا چاہیے تا کہ لوگ وہاں نہ جاسکیں۔ ان کے ٹوئٹ کے بعد خلد آباد علاقہ جہاں مقبرہ موجود ہے، کے کچھ لوگوں نے مقبرہ کو مقفل کرنے کی کوشش کی۔

اس مقبرہ کو محکمہ آثار قدیمہ کا تحفظ حاصل ہے۔ ربط پیدا کرنے پر محکمہ آثار قدیمہ کے اورنگ آباد سرکل کے سپرنٹنڈنٹ ملن کمار چولے نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ کچھ لوگوں نے یہ دعویٰ کرتے ہوئے کہ مقبرے کو مسمار کیے جانے کا خطرہ ہے، اسے مقفل کرنے کی کوشش کی۔

مگر میں نے کہا کہ جب تک اے ایس آئی کو تحریری شکل میں نہیں دیا جاتا میں اس پر کارروائی نہیں کروں گا۔ ہم نے یادگار کو کھلا رکھا اور اس میں مزید چار سیکورٹی گارڈس کا اضافہ کردیا۔ ہم نے پولیس کو صورت حال سے واقف کروادیا جس نے وہاں سیکورٹی ویان روانہ کی ہے۔“

تبصرہ کریں

Back to top button