اگر اجئے مشرا کے بیٹے کو گرفتار نہیں کیا گیا تو بھوک ہڑتال پر بیٹھ جاؤں گا: سدھو

سدھو پرجوش نظر آرہے تھے کیونکہ وہ کسانوں کے خاندان سے ملاقات کرکے ان کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرنا چاہتے تھے۔ انہوں نے کہاکہ اگر جلد مرکزی وزیر کے لاڈلے کی گرفتاری نہ ہوئی تو وہ وہیں بھوک ہڑتال پر بیٹھیں گے۔

موہالی: پنجاب کانگریس کے سربراہ نوجوت سنگھ سدھو نے کسان خاندانوں کا درد بانٹنے کیلئے لکھیم پوری روانہ ہونے سے قبل آج دو ٹوک الفاظ میں کہاکہ اگر کسانوں کو گاڑی سے کچل کر مارنے والے مرکزی وزیر کے بیٹے کو گرفتار نہیں کیا گیا تو میں وہیں بھوک ہڑتال پر بیٹھ جاؤں گا۔

سدھو پرجوش نظر آرہے تھے کیونکہ وہ کسانوں کے خاندان سے ملاقات کرکے ان کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرنا چاہتے تھے۔ تشدد کے دوران زخمی ہوئے کسانوں سے بھی ملاقات کرنے کا ان کا پروگرام ہے۔ انہوں نے کہاکہ اگر جلد مرکزی وزیر کے لاڈلے کی گرفتاری نہ ہوئی تو وہ وہیں بھوک ہڑتال پر بیٹھیں گے۔

یہاں ایئرپورٹ کے قریب پورے ملک سے جمع ہوئے کانگریس کارکنوں کا تقریباً سو کاروں کا قافلہ آج یہاں سے لکھیم پور کھیری کیلئے روانہ ہوا جس کی قیادت نوجوت سنگھ سدھو کررہے ہیں۔ ان کے ساتھ کئی وزرا پرگٹ سنگھ، سنگت سنگھ گلجیاں، امریندر راجہ وڈنگ، وجے اندر سنگلا سمیت کئی وزرا اور اراکین اسمبلی اور کارکن گئے ہیں۔ قافلہ اب سہارنپور کے قریب پہنچنے والا ہے لیکن ایسا امکان ہے کہ قافلہ کو کہیں آگے جانے سے روک نہ لیا جائے کیونکہ امن وقانون اور دفعہ 144نافذ ہونے کی وجہ سے زیادہ لوگوں کو وہاں جانے کی اجازت نہیں ہے۔

اس سے پہلے سدھو پٹیا لہ سے موہالی پہنچے تھے۔ ریاست کے کئی مقامات سے کارکن یہاں صبح سے جمع ہوئے اور جب جانے والے تمام لوگ پہنچ گئے تو وہ لکھیم پور کے لئے روانہ ہوئے۔

اس سے پہلے چیف منسٹر چرنجیت سنگھ چنی راہول گاندھی کے ساتھ لکھیم پور کھیری گئے تھے لیکن لکھنو میں انہیں روک لیا گیا۔ انہوں نے مارے گئے کسان خاندانوں کو پچاس پچاس لاکھ روپے اور مارے گئے صحافی کے خاندان کو بھی اتنی ہی رقم دینے کا اعلان کیا۔ ہریانہ سے بھی کانگریس کی سربراہ کماری سیلجا اور سابق چیف منسٹر بھوپندر سنگھ ہڈا کے غصہ مارچ میں جانے کا امکان ہے۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button