ایودھیا کادورہ موخر کرنے راج ٹھاکرے کا اعلان

 اگرچیکہ راج نے کچھ نہیں کہا مگر قیاس آرائی ہے کہ صحت کے مسائل کی وجہ سے دورہ ملتوی کیا گیا مگر ایم این ایس قائدین نے تبصرے سے انکار کردیا۔ اترپردیش میں برج بھوشن شرم سنگھ نے ”ملتوی“ کرنے کے دعووؤں کو مسترد کردیا اور کہا کہ راج نے اپنا دورہ ”منسوخ“ کردیا ہے اور راج کی معذرت خواہی تک ان کا احتجاج جاری رہے گا۔

ممبئی: مہاراشٹرا نونرمان سینا کے صدر راج ٹھاکرے نے آج اعلان کیا کہ انہوں نے 5 جون کے اپنے مجوزہ دورہ ایودھیا کو فی الحال عارضی طور پر ملتوی کردیا ہے۔ راج نے بذات خود سوشل میڈیا پر یہ اعلان کیا مگر اس فیصلے کی وجہ نہیں بتائی۔ ایم این ایس کے ترجمان سندیپ دیشپانڈے اور پارٹی لیڈر بال نندگاؤنکر دونوں نے ہی اس فیصلے کی حقیقی وجہ بتانے سے انکار کردیا مگر تیقن دیا کہ راج اتوار کو پونے میں اپنے جلسہ عام میں اس پر روشنی ڈالیں گے۔

 ایم این ایس کو مزید ہزیمت اس وقت اٹھانی پڑی جب شیوسینا کے وزیر سیاحت آدتیہ ٹھاکرے اور ریاستی کانگریس صدر نانا پٹولے دونوں نے اعلان کیا کہ رام للا کے درشن کے لیے ان کا دورہ حسب شیڈول ہوں گے اور یہ دورے غیرسیاسی ہیں۔ راج کا  یہ اچانک فیصلہ ایک ایسے وقت سامنے آیا جب اترپردیش حتیٰ کے دیگر شمالی ریاستوں کے بی جے پی کے بعض قائدین اور کارکنان ان کے ایودھیا دورہ کی مخالفت کررہے ہیں۔

وہ 2008ء میں ایم این ایس کے ایجی ٹیشن میں شمالی ہندوستانیوں کے ساتھ راج ٹھاکرے کی بدسلوکی کے لیے ان سے معذرت خواہی کا مطالبہ کررہے تھے۔ مخالف راج ٹھاکرے احتجاج کا آغاز اترپردیش بی جے پی کے ایم پی  برج بھوشن شرن سنگھ نے کیا تھا اور انتباہ دیا تھا کہ جب تک وہ معافی نہیں مانگیں گے، ان کے لاکھوں حامی جون میں ایودھیا میں ان کے داخلے کو روک دیں گے۔

 اگرچیکہ راج نے کچھ نہیں کہا مگر قیاس آرائی ہے کہ صحت کے مسائل کی وجہ سے دورہ ملتوی کیا گیا مگر ایم این ایس قائدین نے تبصرے سے انکار کردیا۔ اترپردیش میں برج بھوشن شرم سنگھ نے ”ملتوی“ کرنے کے دعووؤں کو مسترد کردیا اور کہا کہ راج نے اپنا دورہ ”منسوخ“ کردیا ہے اور راج کی معذرت خواہی تک ان کا احتجاج جاری رہے گا۔

 قبل ازیں خطرے کا اندیشہ ظاہر کرتے ہوئے نندگاؤنکر نے مہاوکاس اگھاڑی کے وزیر داخلہ دلیپ ولسے پاٹل سے ملاقات کرکے راج کے لیے ریاستی حکومت یا مرکز سے تحفظ کی فراہمی کا مطالبہ کیا۔ ساتھ ہی انہوں نے انتباہ دیا کہ اگر راج کابال بھی بیکا ہوا تو مہاراشٹرا جل جائے گا۔

“ حالانکہ دورہ ایودھیا کے لیے تیاریاں جاری تھیں۔ واضح رہے کہ تمام مساجد سے لاؤڈ اسپیکرس کو ہٹانے کے لیے احتجاج شروع کرنے پر گزشتہ ایک ماہ سے راج سرخیوں میں ہیں۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button