بہار کے ضلع گیا میں احتجاجی طلبا نے شرمجیوی ایکسپریس کے ڈبوں کو آگ لگادی

ترنگا تھامے احتجاجیوں کی بڑی تعداد پٹنہ۔ گیا ریلوے سکشن پر صبح جمع ہوگئی۔ شرمجیوی ایکسپریس جیسے ہی وہاں پہنچی انہوں نے پہلے سنگباری کی اور بعد میں بعض ڈبوں کو آگ لگادی۔ سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس گیا آدتیہ کمار نے اس واقعہ کی توثیق کی۔

پٹنہ: متلاشیان روزگار اور طلبا کا جاریہ احتجاج چہارشنبہ کے دن پُرتشدد ہوگیا۔ احتجاجیوں کی بڑی تعداد نے بہار کے ضلع گیا میں نئی دہلی جانے والی شرمجیوی ایکسپریس کے کئی ڈبو کو آگ لگادی۔ پٹنہ‘ آرا اور بکسر میں احتجاجیوں کی بڑی تعداد مظاہرہ کررہی ہے۔ راج گیر‘ نئی دہلی شرمجیوی ایکسپریس ٹرین کا رخ گیا کی طرف موڑدیا گیا تھا تاکہ وہ وہاں سے دین دیال اُپادھیائے (مغل سرائے) جائے اور وہاں سے نئی دہلی کا رخ کرے۔

 ترنگا تھامے احتجاجیوں کی بڑی تعداد پٹنہ۔ گیا ریلوے سکشن پر صبح جمع ہوگئی۔ شرمجیوی ایکسپریس جیسے ہی وہاں پہنچی انہوں نے پہلے سنگباری کی اور بعد میں بعض ڈبوں کو آگ لگادی۔ سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس گیا آدتیہ کمار نے اس واقعہ کی توثیق کی۔ انہوں نے کہا کہ طلبا نے ٹرین پر پتھر پھینکے اور اسے آگ لگادی۔

 ہم ویڈیو ثبوت کی بنیاد پر احتجاجیو ں کی نشاندہی کی کوشش میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے لاؤڈ اسپیکرس پر احتجاجی طلبا سے پُرامن رہنے کی اپیل کی تھی۔ آر آر بی (ریلوے رکروٹمنٹ بورڈ) مسئلہ کی یکسوئی کے لئے کمیٹی تشکیل دے چکا ہے۔ گیا کے علاوہ طلبا کی بڑی تعداد سہسرام‘ بھبوا روڈ‘ سیتامڑھی‘ مظفر پور‘ بکسر‘ آرا‘ پٹنہ‘ ویشالی  اور دیگر مقامات پر جمع ہے۔

 مدھوبنی میں پولیس نے احتجاجیوں پر فائرنگ کی۔ فائرنگ میں 3  افراد کے زخمی ہونے کی خبر ہے۔ سمستی پور کے دل سنگھ سرائے ریلوے اسٹیشن پر طلبا نے ریلوے پٹری کی کنیکٹنگ پلیٹس نکال دیں اور انہیں ریلوے لائن پر رکھ دیا۔ طلبا اور متلاشیان روزگار‘ ریلویز کے نئے اعلامیہ کے خلاف احتجاج کررہے ہیں جس میں 2 امتحانات کی بات کہی گئی ہے۔

 احتجاجیوں کا کہنا ہے کہ 2019 کے پچھلے اعلامیہ میں صرف ایک امتحان کی بات کہی گئی تھی۔ آر آر بی نے اب نیا اعلامیہ جاری کیا ہے اور 2  امتحانات تجویز کئے ہیں۔ عہدیداروں پر بے قاعدگیوں کا بھی الزام ہے۔ کہا جارہا ہے کہ 50 نشانات لینے والے طلبا کامیاب قراردیئے گئے جبکہ 80 تا 85 فیصد مارکس لینے والے کئی امیدواروں کو فیل کردیا گیا۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button