بین طبقاتی شادی پر قتل، ملزمین کو سر عام پھانسی دینے کا مطالبہ

اس واقعہ کے ملزمین کو سخت سزادینے کامطالبہ کرتے ہوئے کل شب بیگم بازار میں مومی شمعوں کی ریلی نکالی گئی۔21سالہ نیرج پنوار نے دیڑھ سال پہلے سنجنا نامی لڑکی سے بین طبقاتی شادی کی تھی۔

حیدرآباد: بین طبقاتی شادی پر شہرحیدرآباد کے علاقہ بیگم بازار کولسہ واڑی میں پیش آئے ایک نوجوان کے قتل کی واردات پر اس کی بیوی نے قاتلوں کو سرعام پھانسی کی سزادینے کامطالبہ کیااورکہاکہ ان ملزمین کو سزا نہیں دی گئی تو وہ اس کا بھی قتل کردیں گے۔

اس واقعہ کے ملزمین کو سخت سزادینے کامطالبہ کرتے ہوئے کل شب بیگم بازار میں مومی شمعوں کی ریلی نکالی گئی۔21سالہ نیرج پنوار نے دیڑھ سال پہلے سنجنا نامی لڑکی سے بین طبقاتی شادی کی تھی۔سنجنا کے رشتہ داروں نے اس لومیریج پر نیرج کا قتل کردیاتھا۔

پولیس نے اس معاملہ میں تاحال 5ملزمین کو گرفتار کرلیاہے۔بعض عوامی تنظیموں کی جانب سے نیرج کی اہلیہ کی حمایت میں مومی شمعوں کی ریلی نکالی گئی۔اس میں نیرج کی اہلیہ کے علاوہ بیگم بازار کے کئی تاجروں اورمارواڑی طبقہ سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کرتے ہوئے انصاف کامطالبہ کیا اورپلے کارڈس تھام کر نعرہ بازی کی۔

ان پلے کارڈس پر نیرج کی تصاویر اور اس سے انصاف کو یقینی بنانے کامطالبہ پولیس سے کیاگیا تھا۔ بعض عوامی تنظیموں کے لیڈروں اورنمائندوں نے نیرج کے ارکان خاندان سے ملاقات کرتے ہوئے ان کو پُرسہ دیا،نیرج کے قاتلوں کی جلدسزااورنیرج کے خاندان سے انصاف پر زوردیا۔اس موقع پر کسی بھی قسم کے ناگہانی واقعہ کی روک تھام کے لئے پولیس کی جانب سے وسیع بندوبست کیاگیاتھا۔

 نیرج کی بیوی سنجنا اوراس ریلی میں شریک دیگر افراد نے نیرج کی یاد میں سڑک پر مومی شمعیں جلائی۔ سنجنا نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے تمام سے اس سلسلہ میں تعاون کی خواہش کی۔انہوں نے ان سے انصاف کامطالبہ کیا اور کہا کہ ان کی جان کو خطرہ ہے اور ملزمین ان کی بھی جان لے لیں گے کیونکہ ان کو بھی جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button