تیستا سیتلواد‘ مسلم متاثرین فسادات کی قبروں پر اپنا تاج محل بنانا چاہتی تھیں: ظفر سریش والا

ظفر سریش والا نے تیستا سیتلواد اور ان کی این جی او (غیرسرکاری تنظیم) سنٹر فار جسٹس اینڈ پیس (سی جے پی) پر 2002 کے فسادات کیس اور مسلمانوں کے کاز کے بے جا استعمال کے لئے سخت تنقید کی۔

احمدآباد: تاجر اور سابق چانسلر مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی ظفر سریش والا نے تیستا سیتلواد اور ان کی این جی او (غیرسرکاری تنظیم) سنٹر فار جسٹس اینڈ پیس (سی جے پی) پر 2002 کے فسادات کیس اور مسلمانوں کے کاز کے بے جا استعمال کے لئے سخت تنقید کی۔

آئی اے این ایس سے خصوصی بات چیت میں ظفر سریش والا نے پیر کے دن کہا کہ تیستا سیتلواد اور ان کی این جی او نے 2002کے متاثرین ِ فسادات کی فلاح و بہبود کے لئے کبھی کوئی کام نہیں کیا۔ وہ اپنے ناپاک ایجنڈہ کے لئے متاثرین کی حالت ِ زار کو استعمال کرتی رہیں۔

کانگریس قائد احمد پٹیل مرحوم کا نام لئے بغیر ظفر سریش والا نے کہا کہ کانگریس کا ایک بڑا گجراتی قائد جو ملک میں انتہائی طاقتور سمجھا جاتا تھا‘ تیستا کی تائید کررہا تھا۔ اس قائد نے مسلمانوں کی فلاح و بہبود کے لئے کبھی بھی کوئی کام نہیں کیا۔

اس نے گجرات فسادات کے متاثرین کو فراموش کردیا۔ ظفر سریش والا نے یہ بھی الزام عائد کیا کہ کانگریس نے مسلمانوں کی کبھی بھی کوئی مدد نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ تیستا سیتلواد مسلم متاثرین ِ فسادات کی قبروں پراپنا تاج محل بنانا چاہتی تھیں۔

مسلم قائد کے بموجب 2002کے فسادات میں ہرین پانڈیا‘ گوردھن زڈافیا‘ پروین توگڑیا‘ بابو بجرنگی اور جئے دیپ پٹیل کا ہاتھ تھا۔ ظفر سریش والا نے کہا کہ ہرین پانڈیا نے ایک ہجوم کی قیاد ت کی تھی جس نے میرا مکان جلادیا تھا۔ اسی بھیڑ نے واسنا کی ایک مسجد کو آگ لگادی تھی لیکن تیستا اور ان کی تنظیم کی تیارکردہ فہرست میں ان لوگوں کا نام ملزمین کے طورپر درج نہیں۔

انہوں نے کہا کہ میں نے 2002-03میں یہ مسائل اٹھائے تھے لیکن اس وقت مجھے اینٹی مسلم (مسلم دشمن) کہا گیا تھا۔ تیستا سیتلواد اور ان کی تنظیم کی نیت پر سوال اٹھاتے ہوئے ظفر سریش والا نے کہا کہ 1600 بے قصور مسلمان مارے گئے‘ احمدآباد میں ایک ہزار دکانوں اور کاروباری اداروں کو جلادیا گیا۔

تیستا نے کتنے متاثرین سے ملاقات کی؟ تیستا سیتلواد یا ان کی تنظیم نے کتنے متاثرین ِ فسادات کی بازآبادکاری کی۔ اس کے برخلاف دوسری مسلم تنظیموں جیسے گجرات سارواجینک ویلفیر ٹرسٹ‘ افضل میمن‘ جمعیت علمائے ہند‘ سیاست وغیرہ نے فسادات سے متاثرہ کنبوں کی بازآبادکاری کی۔

تبصرہ کریں

Back to top button