جسٹس کھانولکر سپریم کورٹ سے ریٹائر

جسٹس کھانولکر نے اس بنچ کی بھی صدارت کی جس نے 2002 کے فسادات میں اس وقت کے گجرات کے چیف منسٹر نریندر مودی اور 63 دیگر کو کلین چٹ کی تصدیق کی تھی۔

نئی دہلی: سپریم کورٹ کے جج جسٹس اے ایم کھانولکر جمعہ کو ریٹائر ہو گئے۔جسٹس کھانولکر عدالت عظمیٰ کی بنچ کا حصہ تھے جس نے سبریمالا مندر میں خواتین کے داخلے، آدھار، زنا کے مجرمانہ التزام اور ہم جنسی تعلقات کو جرم سے مبرا قرار دینے سمیت کئی تاریخی فیصلے کئے تھے۔

جسٹس کھانولکر کی زیر صدارت بنچ نے حال ہی میں منی لانڈرنگ کی روک تھام کے قانون کی دفعات کو برقرار رکھا تھا۔ جسٹس کھانولکر نے اس بنچ کی بھی صدارت کی جس نے 2002 کے فسادات میں اس وقت کے گجرات کے چیف منسٹر نریندر مودی اور 63 دیگر کو کلین چٹ کی تصدیق کی تھی۔

چھ سال سے زیادہ کے اپنے دور کے اختتام پر جسٹس کھانولکر، چیف جسٹس این وی رمنا اور دو دیگر ججوں کے ساتھ رسمی بنچ پر بیٹھے ہوئے تھے۔ انہوں نے کہا، ’الوداعی ریمارکس میں صرف اتنا کہوں گا کہ آپ سب کے پیار کا شکریہ۔ بیحدشکریہ۔ خدا آپ پر کرم کرے“۔

 جسٹس کھانولکر کو مئی 2016 میں سپریم کورٹ کے جج کے طور پر ترقی دی گئی تھی۔وہ 30 جولائی 1957 کو پونے میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے ممبئی کے ایک لاء کالج سے ایل ایل بی کیا۔ وہ 4 اپریل 2013 کو ہماچل پردیش کی ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اور بعد میں 24 نومبر 2013 کو مدھیہ پردیش کی ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کے طور پر مقرر ہوئے۔

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button