جموں وکشمیر میں عوام کا مزاج بی جے پی کے خلاف ہے: سید محمد الطاف بخاری

بخاری نے کہا کہ یونین ٹریٹری میں آنے والا وقت نئے چہروں اور نئی جماعتوں کا ہے۔ حد بندی کمیشن کی حتمی رپورٹ کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ کمیشن نے لوگوں کے بجائے بی جے پی کو با اختیار بنا دیا ہے۔

جموں: جموں و کشمیر اپنی پارٹی کے صدر سید محمد الطاف بخاری کا کہنا ہے کہ جموں وکشمیر حد بندی کمیشن نے لوگوں کے بجائے بی جے پی کو با اختیار بنا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں بھی اور جموں صوبے میں بھی لوگوں کا مزاج بی جے پی کے خلاف ہے۔ ان کا ماننا ہے کہ جموں و کشمیر میں نئی جماعتوں کے لئے اچھی ہوا چل رہی ہے۔

موصوف صدر ان باتوں کا اظہار جمعہ کے روز یہاں ایک تقریب کے حاشئے پر نامہ نگاروں کے ساتھ بات کرنے کے دوران کیا۔انہوں نے کہا: ’کشمیر میں بھی اور جموں صوبے میں بھی لوگوں کا مزاج بی جے پی، نیشنل کانفرنس، پی ڈی پی کے خلاف ہے‘۔ان کا کہنا تھا کہ جموں و کشمیر میں نئی سیاسی جماعتوں کے لئے اچھی ہوا چل رہی ہے۔

بخاری نے کہا کہ یونین ٹریٹری میں آنے والا وقت نئے چہروں اور نئی جماعتوں کا ہے۔حد بندی کمیشن کی حتمی رپورٹ کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا: ’کمیشن نے لوگوں کے بجائے بی جے پی کو با اختیار بنا دیا ہے‘۔ان کا کہنا تھا کہ راجوری کو اننت ناگ سے اور کرناہ کو کپوارہ سے جوڑا گیا ہے جو نا انصافی ہے۔ قابل ذکر ہے کہ جموں وکشمیر حد بندی کمیشن نے جمعرات کے روز اپنی حتمی رپورٹ جاری کی ہے۔ کمیشن کی اس رپورٹ پر جموں وکشمیر کی سیاسی جماعتوں نے شدید رد عمل ظاہر کیا ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button