حجاب مسئلہ پر کرناٹک ہائی کورٹ کا فیصلہ مایوس کن : عمر عبداللہ اور محبوبہ مفتی

قومی کمیشن برائے خواتین کی چیئرپرسن ریکھا شرما نے آج حجاب پر امتناع کے بارے میں کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلہ کا خیرمقدم کیا ۔

سری نگر ۔ جموں و کشمیر کے سابق چیف منسٹرس عمر عبداللہ اور محبوبہ مفتی نے آج کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلہ کو جس کے ذریعہ سرکاری اسکولوں میں حجاب پر امتناع کو برقرار رکھا گیا ہے ، مایوس کن قرار دیا ۔

عمر عبداللہ نے اپنے ٹوئٹر پیج پر کہا کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلہ سے بے حد مایوسی ہوئی ہے ۔ حجاب کے بارے میں آپ چاہے کچھ بھی سوچتے ہوں ، یہ صرف کپڑے کا ایک ٹکڑا نہیں ہے ، یہ معاملہ کسی خاتون کو یہ حق دینے سے متعلق ہے کہ وہ کس طرح کا لباس پہننا چاہتی ہے ۔ عدالت نے اس بنیادی حق کو برقرار نہیں رکھا ہے ، جو ایک انصاف کی بگڑی ہوئی شکل ہے ۔

ایک اور سابق چیف منسٹر محبوبہ مفتی نے کہاکہ حجاب پر امتناع برقرار رکھنے کرناٹک ہائی کورٹ کا فیصلہ بے حد مایوس کن ہے ۔ ایک طرف ہم خواتین کو بااختیار بنانے کی بات کرتے ہیں ، اس کے باوجود ہم انہیں ایک معمولی حق دینے کے لیے تیار نہیں ہیں ۔ یہ صرف مذہبی مسئلہ نہیں ہے ، بلکہ اپنی پسند پر عمل کرنے کی آزادی کا مسئلہ ہے ۔

علیحدہ اطلاع کے بموجب قومی کمیشن برائے خواتین کی چیئرپرسن ریکھا شرما نے آج حجاب پر امتناع کے بارے میں کرناٹک ہائی کورٹ کے فیصلہ کا خیرمقدم کیا ۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button