آپ کی خاموشی سے نفرت کی آوازوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے

معزز وزیراعظم، آپ کی خاموشی سے نفرت سے بھری ہوئی آوازوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے اور ہمارے ملک کے اتحاد و یکجہتی کو خطرہ لاحق ہوتا ہے۔

نئی دہلی: بنگلورو اور احمدآباد کے انڈین انسٹی ٹیوٹ آف مینجمنٹ کے طلبہ اور فیکلٹی ارکان کے ایک گروپ نے وزیراعظم نریندرمودی کو ایک مکتوب روانہ کیا ہے اور ان سے خواہش کی ہے کہ وہ ملک کو ان طاقتوں سے نجات دلائیں جو ہم میں پھوٹ ڈالنا چاہتی ہیں اور کہا کہ ان کی خاموشی کی وجہ سے نفرت بھڑکانے والی آوازوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔

اس مکتوب پر 180 افراد نے دستخط کئے ہیں جس کے ذریعہ نفرت بھڑکانے والی تقاریر اور اقلیتوں پر حملوں کو اجاگر کیا گیا ہے۔

مکتوب میں کہا گیا کہ معزز وزیراعظم، ملک میں بڑھتی عدم رواداری پر آپ کی خاموشی ہم سب کیلئے صدمہ انگیز ہے جو اپنے ملک کے ہمہ تہذیبی تانے بانے کی قدر کرتے ہیں۔

معزز وزیراعظم، آپ کی خاموشی سے نفرت سے بھری ہوئی آوازوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے اور ہمارے ملک کے اتحاد و یکجہتی کو خطرہ لاحق ہوتا ہے۔

ہم آپ کی قیادت سے توقع کرتے ہیں کہ وہ بحیثیت قوم ہمارے ذہنوں اور دلوں کو اپنے عوام کیلئے نفرت بھڑکانے سے موڑدے۔ ہمارا ماننا ہے کہ کوئی سماج یا تو اختراعیت، ایجادات اور ترقی پر توجہ مرکوز کرسکتا ہے یا پھر اپنے اندر اختلافات پیدا کرسکتا ہے۔

انہوں نے وزیراعظم سے اپیل کی کہ وہ ملک کو ان طاقتوں سے دور لے جائیں جو ہم میں پھوٹ ڈالنے کی خواہاں ہیں۔ مکتوب میں کہا گیا کہ دستخط کنندگان ایک ایسے ہندوستان کی تعمیر چاہتے ہیں جو دنیا میں شمولیت اور تنوع کی مثال ہو۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ مودی ملک کو صحیح انتخاب کی طرف لے جائیں گے۔ مکتوب میں اس بات کو نوٹ کیا گیا کہ دستور‘ عوام کو اپنے مذہب پر وقار، کسی خوف اور شرم کے بغیر عمل کرنے کا حق عطا کرتا ہے۔

اس میں مزید کہا گیا کہ اب ملک میں خوف کا احساس پایا جاتا ہے۔ حالیہ عرصہ میں عبادتگاہوں بشمول چرچس میں توڑ پھوڑ کی گئی ہے اور ہمارے مسلم بھائی بہنوں کے خلاف ہتھیار اٹھانے کی اپیلیں کی گئی ہیں۔ یہ سارے کام تحفظ اور اس کے خلاف ہونے والی کاروائی کے کسی خوف کے بغیر کئے گئے ہیں۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.