اترپردیش کی منڈیوں میں کھلے عام کرپشن: ورون گاندھی

ویڈیو میں ورون گاندھی کو یہ کہتے سنا جاسکتا ہے کہ یہ یوپی حکومت کے لئے ”بڑی شرمندگی“ کی بات ہے۔ عہدیداروں اور دلالوں کے گٹھ جوڑ نے کسانوں کو اپنے اجناس (ملک بھر میں) مقررہ دام سے کم دام پر فروخت کرنے پر مجبور کردیا ہے۔

نئی دہلی: کسانوں کے مسئلہ پر حکومت اترپردیش کو نشانہ ئ تنقید بناتے ہوئے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ورون گاندھی نے جمعہ کے دن الزام عائد کیا کہ خریداری مراکز(منڈیوں) میں کرپشن جگ ظاہر ہے۔ کسان‘ دلالوں کو اپنے اجناس فروخت کرنے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے اقل ترین امدادی قیمت (ایم ایس پی) کے لئے قانونی ضمانت کا بھی مطالبہ کیا۔

 انہوں نے کہا کہ قانونی ضمانت نہیں دی گئی تو منڈیوں میں کاشتکاروں کا استحصال جاری رہے گا۔ ایم ایس پی کے لئے قانونی ضمانت‘ 3 زرعی قوانین کے لئے احتجاج کررہی کسان یونینوں کے مطالبات میں شامل ہے۔ ورون گاندھی نے بریلی کی منڈیوں میں ایک سرکاری عہدیدار سے بات چیت کا ویڈیو بھی پوسٹ کیا۔

 ویڈیو میں ورون گاندھی کو یہ کہتے سنا جاسکتا ہے کہ یہ ریاستی حکومت کے لئے ”بڑی شرمندگی“ کی بات ہے۔ عہدیداروں اور دلالوں کے گٹھ جوڑ نے کسانوں کو اپنے اجناس (ملک بھر میں) مقررہ دام سے کم دام پر فروخت کرنے پر مجبور کردیا ہے۔ بی جے پی رکن پارلیمنٹ نے کہا کہ ریاست کی ہر منڈی میں رشوت جگ ظاہر ہے۔ کسانوں سے غلہ خریدنے سے انکار کردیا جاتا ہے۔ اس میں نقص نکالا جاتا ہے جس کے بعد کاشتکار اپنی پیداوار درمیانی آدمیوں کو فروخت کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیں۔

سرکاری عہدیداروں کو کمیشن ملتا ہے۔ کسان پہلے ہی بڑھتی پیداواری لاگت‘ کھاد کی کمی اور ناسازگار موسم کی مار جھیل رہے ہیں۔ کسانوں کی نئی نسل زراعت سے دور ہوجائے گی جس کے نتیجہ میں ہماری غذائی اورقومی سلامتی خطرہ میں پڑجائے گی۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.