او بی سی مسلم گروپس بھی ذات پات پر مبنی مردم شماری کے حامی

صدر نیشنل مومن کانفرنس شکیل الزماں انصاری نے کہا کہ وزیراعظم خود کہتے ہیں کہ وہ او بی سی برادری سے تعلق رکھتے ہیں اور انہیں برادری کے مسائل کا پتہ ہے۔

نئی دہلی: او بی سی مسلم گروپس نے اب ملک میں ذات پات پر مبنی مردم شماری پر زور دینا شروع کردیا ہے جو این ڈی اے تا یوپی اے تمام سیاسی جماعتوں کا بڑا مطالبہ ہے۔

مسلم او بی سی تنظیم نیشنل مومن کانفرنس نے چہارشنبہ کے دن وزیراعظم سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ذات پات پر مبنی مردم شماری اب نہ کی گئی تو دیگر پسماندہ طبقات کو مزید 10سال انتظار کرنا ہوگا۔

صدر نیشنل مومن کانفرنس شکیل الزماں انصاری نے کہا کہ وزیراعظم خود کہتے ہیں کہ وہ او بی سی برادری سے تعلق رکھتے ہیں اور انہیں برادری کے مسائل کا پتہ ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ وزیراعظم‘ برادری کا یہ مطالبہ قبول کرلیں گے۔

شکیل الزماں انصاری نے جو نیشنل بیاک ورڈ کمیشن کے رکن ہیں‘ کہا کہ ملک کو معلوم ہونا چاہئے کہ او بی سی کی آبادی کتنی ہے۔ ان کا سماجی موقف کیا ہے تاکہ فلاحی اسکیمیں مخصوص برادری کی طرف موڑی جاسکیں۔

نیشنل مومن کانفرنس نے اس سلسلہ میں قرارداد منظور کی ہے اور وہ وزیراعظم کو لکھے گی۔ اس کے علاوہ آل انڈیا پسماندہ مسلم محاذ نے بھی جو پسماندہ مسلم برادریوں کے لئے ریزرویشن کی مہم چلارہا ہے‘ ذات پات کی بنیاد پر اقلیتی فرقہ کی مردم شماری کا مطالبہ کیا ہے۔

مستقبل کا لائحہ عمل طئے کرنے 17 مسلم تنظیموں کی میٹنگ حال میں ہوئی تھی۔

آل انڈیا پسماندہ مسلم محاذکے صدر علی انور انصاری نے کہا کہ ذات پات پر مبنی مردم شماری صرف ہندو فرقہ تک محدود نہ رہے بلکہ اسے اقلیتی فرقہ تک توسیع دی جانی چاہئے کیونکہ مسلمانوں میں بھی ذات پات کا نظام رائج ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.