ای ڈبلیو ایس تحفظات: مرکز سالانہ حد آمدنی پر نظرثانی کرنے تیار

سالیسیٹر جنرل تشار مہتا نے مرکز کی نمائندگی کرتے ہوئے جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی زیرصدارت بنچ کو یقین دلایا کہ اُس وقت تک نیٹ کے لئے کونسلنگ نہیں کی جائے گی۔

نئی دہلی: مرکز نے آج سپریم کورٹ کو مطلع کیا کہ اس نے معاشی طورپر پسماندہ طبقات (ای ڈبلیو ایس) کو تحفظات کے لئے آمدنی کی حد کے اہلیتی معیار 8لاکھ روپے سالانہ پر نظرثانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور کہا کہ اندرون 4ہفتے تازہ فیصلہ کیا جائے گا۔

سالیسیٹر جنرل تشار مہتا نے مرکز کی نمائندگی کرتے ہوئے جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی زیرصدارت بنچ کو یقین دلایا کہ اُس وقت تک نیٹ کے لئے کونسلنگ نہیں کی جائے گی۔

مہتا نے اس معاملہ میں کہا کہ مجھے یہ کہنے کی ہدایت دی گئی ہے کہ حکومت نے اہلیتی معیار پر نظرثانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ہم اندرون 4ہفتے فیصلہ کریں گے۔

سینئر ایڈوکیٹ اروند داتار نے جو درخواست گزاروں کی نمائندگی کررہے تھے‘ کہا کہ سوال یہ پیدا ہوتاہے کہ آیا 70 ہزار روپے ماہانہ آمدنی کے حامل شخص کو معاشی طورپر پسماندہ قراردیا جاسکتا ہے؟ حد کے مسئلہ پر جسٹس سوریہ کانت نے کہا کہ اس میں ردوبدل کیا جاسکتا ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.