بنگلہ دیش میں ہندوؤں کے خلاف تشدد کی جانچ کیلئے بین الاقوامی کمیشن قائم ہو:وی ایچ پی

سوامی وگیانند نے مانگ کی ہے کہ بنگلہ دیش میں متاثرہ ہندو اقلیتوں کے جان و مال‘ پوجا کے مقامات‘ مندروں کی سیکوریٹی اور انہیں انصاف دلانے کے لئے بنگلہ دیش حکومت پر دباو ڈالا جانا چاہئے۔

نئی دہلی: وشوا ہندوپریشد (وی ایچ پی) نے بنگلہ دیش میں ہندو اقلیتوں کے خلاف ہورہے تشدد پر روک کے لئے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل‘ انسانی حقوق کونسل کے ہائی کمشنر اور یوروپی یونین کے صدر کو خط لکھ کر مانگ کی ہے کہ اقلیتوں پر ہورہے تشدد کی جانچ کے لئے بین الاقوامی کمیشن قائم کیا جائے۔

وی ایچ پی کے جوائنٹ جنرل سکریٹری اور بیرونی معاملات کے سربراہ سوامی وگیانند نے ہفتہ کے دن یہاں ایک پریس ریلیز جاری کرکے کہا کہ بین الاقوامی تنظیم کی طرف سے عالمی اداروں کو لکھے خط میں سوامی وگیانند نے مانگ کی ہے کہ بنگلہ دیش میں متاثرہ ہندو اقلیتوں کے جان و مال‘ پوجا کے مقامات‘ مندروں کی سیکوریٹی اور انہیں انصاف دلانے کے لئے بنگلہ دیش حکومت پر دباو ڈالا جانا چاہئے۔

یہ بھی یقینی ہونا چاہئے کہ مجرموں کو سخت سزا اور متاثرین کو مناسب معاوضہ ملے۔انہوں نے مانگ کی ہے کہ بنگلہ دیش کی منتخب حکومت کو چیلنج کرنے والی مجرمانہ تنظیموں کے خلاف اقوام متحدہ سلامتی کونسل فوری طورپر کارروائی کرے۔ سوامی وگیانند کا مطالبہ ہے کہ بنگلہ دیش حکومت اپنے ”ویسٹیڈ پراپرٹی 2013“کو ختم کرے۔

اس طرح کے قانون کی وجہ سے ہی وہاں اقلیتوں پر تشدد بڑھ رہا ہے۔اس قانون کے تحت بنگلہ دیش چھوڑ کرجانے والوں کی املاک پر ان کے پڑوسی قبضہ کرسکتے ہیں۔

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل‘ انسانی حقوق کونسل کے ہائی کمشنر اور یوروپی یونین کے صدر کو لکھے خط میں اس بات پر تشویش ظاہر کی گئی ہے کہ بنگلہ دیش میں اقلیتی ہندوؤں پر مظالم جاری ہیں۔ وہاں 22سے زیادہ اضلاع میں گزشتہ دس بارہ دنوں میں ہندوؤں کے خلاف تشدد‘انسانی حقوق کی سراسر خلاف ورزی ہے۔

ذریعہ
یو این آئی

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.