سی اے اے کی تنسیخ اور 370 کی بحالی کا مطالبہ زور پکڑنے لگا

کشمیری قائدین دفعہ 370 کی بحالی چاہتے ہیں۔ امیر جماعت اسلامی ہند سید سعادت اللہ حسینی نے کہا کہ اب حکومت سے ہماری گزارش ہے کہ وہ دیگر مخالف عوام‘ مخالف دستور قوانین جیسے سی اے اے اور این آر سی بھی جلد واپس لے۔

نئی دہلی: زرعی قوانین واپس لینے کے اعلان کے بعد سی اے اے کی تنسیخ اور جموں وکشمیر میں دفعہ 370 کی بحالی کے مطالبات زور پکڑنے لگے ہیں۔ مسلم رہنماؤں نے وزیراعظم نریندر مودی سے یو اے پی اے اور سی اے اے واپس لینے کی گزارش کی ہے جبکہ جموں و کشمیر کے قائدین نے دفعہ 370 کی بحالی کا مطالبہ کیا ہے۔ پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں یہ مطالبہ ہوسکتا ہے کیونکہ اپوزیشن‘ حکومت کو گھیرنے کے لئے تیا رہے۔ وہ زرعی قوانین رد کردینے کے اعلان کو حکومت کے خلاف جیت قرار دیتی ہے۔اپوزیشن متحد ہوکر اپنے مطالبات کرسکتی ہے۔

 دفعہ 370  اور سی اے اے پر اپوزیشن میں اختلافِ رائے ہوسکتا ہے۔ سیاسی تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ سی اے اے اور 370 کا مسئلہ اٹھایا گیا تو بی جے پی کے لئے چارہ کے طورپر کام کرسکتا ہے تاہم مسلم رہنما ایسا نہیں سوچتے۔ ان کا کہنا ہے کہ سی اے اے احتجاج‘ کووِڈ کی وجہ سے واپس لیا گیا اور اب حکومت کو اس معاملہ میں بھی پیچھے ہٹنا چاہئے۔ کسانوں کے احتجاج کی کامیابی نے ان لوگوں کو نئی امید دی ہے جو حکومت کی مخالفت کرنا چاہتے ہیں۔

 کشمیری قائدین دفعہ 370  کی بحالی چاہتے ہیں۔ امیر جماعت اسلامی ہند سید سعادت اللہ حسینی نے کہا کہ اب حکومت سے ہماری گزارش ہے کہ وہ دیگر مخالف عوام‘ مخالف دستور قوانین جیسے سی اے اے اور این آر سی بھی جلد واپس لے۔ صدر مجلس مشاورت نوید حامد نے کہاکہ تمام خطرناک قوانین بشمول سی اے اے‘ یو اے پی اے واپس لینے کی ضرورت ہے۔ مسلم قائدین کا کہنا ہے کہ سی اے اے تحریک نے کسانوں کو زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کا حوصلہ دیا۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.