ٹی ایم سی ارکان پارلیمنٹ کا مرکزی وزارت داخلہ پر دھرنا

احتجاجی ارکان پارلیمنٹ صدر ترنمول یوتھ کانگریس سائیونی گھوش کی گرفتاری اور تریپورہ میں پارٹی لیڈروں پر حملوں کے خلاف مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کا مطالبہ کررہے تھے۔

نئی دہلی: ترنمول کانگریس (ٹی ایم سی) کے ارکان پارلیمان کا ایک وفد تریپورہ میں پولیس ظلم کے خلاف آج مرکزی وزارت داخلہ کے باہر دھرنا دیا۔

احتجاجی ارکان پارلیمنٹ صدر ترنمول یوتھ کانگریس سائیونی گھوش کی گرفتاری اور تریپورہ میں پارٹی لیڈروں پر حملوں کے خلاف مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کا مطالبہ کررہے تھے۔خبر رساں ادارہ اے این آئی کے ٹوئیٹر میں یہ بات بتائی گئی۔

ڈریک اوبرائین، سکھیندو سیکھر رائے، سنتانوسین اور مالا رائے کے بشمول 16 ارکان پارلیمنٹ آج علی الصبح قومی دارالحکومت پہنچے۔

سائیونی گھوش کو اتوار کے دن تریپورہ پولیس تریپورہ چیف منسٹر بپلب دیو کے ایک عام جلسہ کے دوران ہنگامہ آرائی کے لئے گرفتار کیا گیا تھا۔

اُن کی گرفتاری کے فوری بعد ٹی ایم سی کے چند کارکنوں نے کہا کہ مشرقی اگرتلہ کے خاتون پولیس اسٹیشن جہاں گھوش سے پوچھ تاچھ کی جارہی تھی۔ بی جے پی کارکنوں نے اُن پر حملہ کیا تاہم بی جے پی نے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے ٹی ایم سی پر تریپورہ میں امن درہم برہم کرنے کی کوشش کا الزام عائد کیا۔

اگرتلہ میونسپل کارپوریشن اور دیگر 5 بلدیات کے انتخابات جو 25 / نومبر کو منعقد ہونے والے ہیں کے دوران پُرتشدد واقعات سے کشیدگی پھیلی ہوئی ہے۔

دریں اثناء سپریم کورٹ نے ٹی ایم سی کی جانب سے پیش کردہ توہین عدالت کی درخواست کی سماعت کرنے رضا مندی ظاہر کی ہے۔

درخواست میں تریپورہ میں نظم و ضبط کی صورتحال دن بہ دن خراب ہونے کے بارے میں ادعا پیش کیا گیا۔ درخواست کی سماعت منگل کو مقرر کی گئی ہے۔

عدالت نے قبل ازیں تریپورہ پولیس حکام سے کہی تھی کہ وہ اِس بات کا تیقن کریں کہ انتخابی مہم پُرامن طور پر چلائی جائے اور کسی بھی سیاسی جماعت کو اُس کے دستوری حقوق کے استعمال سے روکا نہ جائے۔

ذریعہ
منصف ویب ڈسک

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.