پیگاسس جاسوسی پر ہماری باتیں سچ ہوئی: راہول گاندھی

راہول گاندھی نے کہا کہ وہ اس مسئلہ کو بار بار اٹھا رہے ہیں اور یہ جمہوریت کے لئے تشویشناک ہے۔ قومی سلامتی کے نام پر چیزیں اور حقائق چھپائے نہیں جا سکتے۔

نئی دہلی: پیگاسس کیس کی سماعت اور تحقیقات کیلئے ایک کمیٹی قائم کرنے کے سپریم کورٹ کے حکم پرمودی حکومت کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کانگریس کے سابق صدر راہول گاندھی نے چہارشنبہ کو کہا کہ عدالت عظمیٰ نے ہماری بات پر مہر لگا ئی ہے اور ہماری پارٹی پھر سے اس معاملہ کو پارلیمنٹ میں اٹھائے گی۔

راہول گاندھی نے کہا کہ وزیر اعظم ملک سے اوپر نہیں ہیں۔ راہول گاندھی نے الزام لگایا کہ پیگاسس کے ذریعہ قومی اداروں پر حملہ کیا گیا ہے۔ الیکشن کمیشن، پارلیمنٹ، وزیراعلیٰ، اپوزیشن لیڈر ، سیاستدانوں اور صحافیوں کی جاسوسی کی کوشش کی گئی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت واضح کرنا چاہیےکہ پیگاسس کس کے خلاف استعمال کیا گیا۔ راہول گاندھی نے کہا کہ وہ اس مسئلہ کو بار بار اٹھا رہے ہیں اور یہ جمہوریت کے لئے تشویشناک ہے۔ قومی سلامتی کے نام پر چیزیں اور حقائق چھپائے نہیں جا سکتے۔

انہوں نے کہا کہ ایسے الزامات سامنے آئے ہیں کہ حکومت پیگاسس جاسوس سافٹ ویئر کے ذریعہ اہم لوگوں کی جاسوسی کر رہی ہے۔ حکومت سامنے آنا چاہیے اور بتانا چاہیے کہ کیا پیگاسس خریدا گیا، کس نے آرڈر دیا اور اس کا استعمال کہاں کہا اور کس کس کے خلاف ہوا۔

متعلقہ

غور طلب ہے کہ سپریم کورٹ نے چہارشنبہ کو مرکزی حکومت کے رویہ پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھاکہ قومی سلامتی کے نام پر سب کچھ چھپایا نہیں جا سکتا۔ سپریم کورٹ نے سپریم کورٹ کے ایک سابق جج کی نگرانی میں ایک کمیٹی تشکیل دی ہے اور اس کے ساتھ ٹیکنیکل امور کے ماہرین کی ایک کمیٹی سے بھی کہا کہ وہ اس پورے معاملہ پر اپنی رائے دے۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.