کانگریس دور میں ہندوستان جزوی مسلم ملک تھا:سدھانشو ترویدی

سدھانشو ترویدی نے کہا کہ ہندوستان کا معاشرہ اپنی طاقت کو بھول چکا ہے۔ اب جب ہندوستان کو اپنی طاقت کا اندازہ ہوگیا ہے تو کانگریس پارٹی میں کھلبلی مچ گئی ہے۔

نئی دہلی: کانگریس پر سخت تنقید کرتے ہوئے بی جے پی کے قومی ترجمان سدھانشو ترویدی نے ہفتہ کے دن کہا کہ ملک کی سب سے قدیم جماعت کے دور میں ہندوستان جزوی طورپر ایک مسلم ملک تھا اور شرعیہ قوانین ملک کے دستور کا حصہ تھے۔ انہوں نے بی جے پی ہیڈکوارٹرس میں کہا کہ پوری ذمہ داری کے ساتھ میرا کہنا ہے کہ مودی کے وزیراعظم بننے سے قبل ہندوستان جزوی طورپر مسلم ملک تھا۔

 انہوں نے ”ہندوتوا کو بدنام کرنے“ پر راہول گاندھی‘ سلمان خورشید اور راشد علوی کو نشانہ ئ تنقید بنایا۔ بی جے پی کے ترجمان سدھانشو ترویدی نے ہفتہ کو یہاں ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کے دور میں اور موجودہ وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت کے اقتدار میں آنے سے پہلے ہندوستان جزوی طور پر مسلم ملک تھا۔

انہوں نے کہا کہ ہندوستان کا معاشرہ اپنی طاقت کو بھول چکا ہے۔ اب جب ہندوستان کو اپنی طاقت کا اندازہ ہوگیا ہے تو کانگریس پارٹی میں کھلبلی مچ گئی ہے۔ ترویدی نے یہ بات کانگریس لیڈر اور سابق مرکزی وزیر سلمان خورشید اور کانگریس لیڈر راشد علوی کے ہندوتوا کے حوالے سے کئے گئے متنازعہ ریمارکس کے تناظر میں کہی۔

درحقیقت، مسٹر علوی نے اتر پردیش میں متنازعہ تبصرہ کرتے ہوئے بھگوان رام کا نام لینے والے شخص کو نشاچر(شیطان) قرار دیا تھا۔ قبل ازیں مسٹر خورشید نے اپنی نئی کتاب ‘سن رائز اوور ایودھیا’ میں ہندوتوا کا موازنہ دہشت گرد تنظیموں آئی ایس آئی ایس اور بوکو حرام جیسے سخت گیر گروپوں سے کیا تھا، جس سے تنازعہ ہوا ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.