کریپٹو کرنسی پر پابندی کیلئے سرمائی سیشن میں بل کی پیشکشی

پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں حکومت کی جانب سے جملہ 26 بل پیش کیے جائیں گے۔ کرپٹو کرنسی اور آفیشیل ڈیجیٹل کرنسی ریگولیشن بل 2021بھی متعارف کرایا جانا ہے۔

نئی دہلی: ہندوستان میں ڈیجیٹل کرنسی کے ریگولیشن اور پرائیویٹ ورچول کرنسی پرپابندی لگانے کے مقصد سے پارلیمنٹ کے سرمائی سیشن میں ایک بل پیش کیا جائے گا۔ سرمائی اجلاس 29نومبرسے شروع ہو رہا ہے۔

پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں حکومت کی جانب سے جملہ 26 بل پیش کیے جائیں گے۔ کرپٹو کرنسی اور آفیشیل ڈیجیٹل کرنسی ریگولیشن بل 2021بھی متعارف کرایا جانا ہے۔

اس بل میں ہندوستان میں ڈیجیٹل کرنسی کے باضابطہ اجراء اورآپریشن کے انتظامات اور ضابطوں کا التزام ہے۔ اس کے علاوہ اس میں پرائیویٹ سطح پر کرپٹو کرنسی یعنی ورچول کرنسی کی تجارت پر پابندی کے التزامات ہیں۔

لوک سبھا کے بلیٹن کے مطابق یہ بل ہندوستان میں ہر قسم کی پرائیویٹ کریپٹو کرنسیوں کی تجارت پر پابندی کے لئے اس میں ورچول کرنسی سے متعلق ٹیکنالوجی کے فروغ اور استعمال کی کچھ چھوٹ بھی دینے کی تجویز ہے۔

متعلقہ

کرپٹو کرنسی پر بڑھتے ہوئے خدشات کے درمیان وزیر اعظم نریندر مودی نے 13 نومبر کو ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ طلب کی تھی اور اس کے مختلف پہلوؤں پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا گیا۔

کرپٹو کرنسی بہت سی مارکیٹوں میں سرمایہ کاری کا ایک پرکشش متبادل بنتی جا رہی ہے لیکن کرپٹو کرنسی کی مارکیٹ میں شفافیت کے فقدان کی وجہ سے اس میں بہت زیادہ اتار چڑھاؤ دیکھنے کو ملتا ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی نے حال ہی میں سڈنی ڈائیلاگ سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ تمام جمہوری ممالک کو کرپٹو کرنسی کے حوالے سے مل کر کام کرنا چاہیے اور اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ ایسی کرنسی غلط لوگوں کے ہاتھ میں نہ جائے اور اس کے چکر میں نوجوان نسل برباد نہ ہو۔ریزرو بینک آف انڈیا کے گورنر ڈاکٹر شکتی کانتا داس نے کہا کہ پرائیوٹ ورچول کرنسی‘ مالیاتی نظام کے لیے خطرہ ہے کیونکہ وہ مرکزی بینک کے زیر انتظام نہیں ہیں۔مرکزکے اعلان کے ساتھ ہی کئی ڈیجیٹل کرنسیوں کی قدر میں بھاری گراوٹ آگئی ہے۔

ذریعہ
یو این آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.