200 چینی فوجی، ہندوستانی علاقہ میں داخل ہوگئے تھے!

ہندوستانی فوجیوں نے پی ایل اے کے لگ بھگ 200 فوجیوں کو روکا جو تبت سے سرحد پار کرکے ہندوستانی علاقہ کے اندر آگئے تھے اور انہوں نے خالی پڑے بنکرس کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی تھی۔ اس پر ٹکراؤ ہوا۔

نئی دہلی: چین کی پیپلز لبریشن آرمی (پی ایل اے) کے لگ بھگ 200 فوجی گزشتہ ہفتہ ہندوستانی علاقہ میں داخل ہوگئے تھے۔ اروناچل پردیش میں حقیقی خط ِ قبضہ(ایل اے سی) پر ان کا ہندوستانی فوج سے آمنا سامنا ہوا۔ ایل اے سی پر حسب ِ معمول طلایہ گردی (پٹرولنگ) کے دوران یہ واقعہ پیش آیا۔

ہندوستانی فوجیوں نے پی ایل اے کے لگ بھگ 200 فوجیوں کو روکا جو تبت سے سرحد پار کرکے ہندوستانی علاقہ کے اندر آگئے تھے اور انہوں نے خالی پڑے بنکرس کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی تھی۔ اس پر ٹکراؤ ہوا۔

کمانڈرس نے مقامی سطح پر بات چیت کے ذریعہ مسئلہ حل کردیا۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ٹکراؤ‘ چند گھنٹے جاری رہا۔ موجودہ پروٹوکول کے تحت مسئلہ کی یکسوئی ہوگئی۔

ہندوستانی انفرااسٹرکچر کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہند۔ چین سرحد باقاعدہ متعین نہیں ہے۔ ایل اے سی کے تعلق سے دونوں ممالک کی رائے جداگانہ ہے۔ دونوں ممالک کے فوجی وہاں تک پٹرولنگ کرتے رہتے ہیں جسے وہ اپنی رائے میں ایل اے سی سمجھتے ہیں۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.