سی اے اے کے خلاف ٹاملناڈو اسمبلی میں قرارداد منظور

قرارداد پیش کرتے ہوئے چیف منسٹر ایم کے اسٹالن نے کہا کہ مذہب‘ شہریت کی بنیاد نہیں ہوسکتا اور مذہبی خطوط پر کوئی بھی قانون نہیں بنایا جاسکتا۔

چینائی: ٹاملناڈو اسمبلی نے چہارشنبہ کو ایک قرارداد منظور کی اور مرکزی حکومت سے شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) رد کردینے کا مطالبہ کیا۔

قرارداد پیش کرتے ہوئے چیف منسٹر ایم کے اسٹالن نے کہا کہ مذہب‘ شہریت کی بنیاد نہیں ہوسکتا اور مذہبی خطوط پر کوئی بھی قانون نہیں بنایا جاسکتا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ سی اے اے‘ سری لنکا کے ٹاملوں کے خلاف ہے۔

اسٹالن نے کہا کہ پناہ گزینوں کو انسانوں کی طرح دیکھنا چاہئے۔ لوگ جب مل جل کر رہ رہے ہوں تو کیا کسی قانون کی ضرورت ہے۔

قرارداد کی مخالفت کرتے ہوئے بی جے پی رکن اسمبلی این ناگیندرن نے کہا کہ قانون‘ ہندوستان میں رہ رہے مسلمانوں کے خلاف نہیں ہے۔ بی جے پی ارکان نے ایوان سے واک آؤٹ کردیا۔

سی اے اے اے 2019 کے ذریعہ 1955 کے شہریت قانون میں ترمیم کی گئی تاکہ افغانستان‘ بنگلہ دیش اور پاکستان میں عتاب جھیل کر دسمبر 2014 سے قبل ہندوستان آنے والی اقلیتوں (ہندوؤں‘ سکھوں‘ بدھ‘ جین‘ پارسی اور عیسائیوں) کو ہندوستانی شہریت دی جائے۔

(آئی اے این ایس)

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.