ایم ایس پی قانون بننے اور اجئے مشرا کی برطرفی تک احتجاج جاری رہے گا: سمیوکت کسان مورچہ

کسان قائدین کا کہنا ہے کہ احتجاج‘ اقل ترین امدادی قیمت (ایم ایس پی) قانون بننے اور مرکزی مملکتی وزیر اجئے مشرا کی برطرفی تک جاری رہے گا۔

 لکھنؤ: سمیوکت کسان مورچہ (ایس کے ایم) پیر کے دن یہاں مہا پنچایت منعقد کرے گا۔ لکھنؤ کے ایکو گارڈن میں کسانوں کی طاقت کے اس مظاہرہ کی منصوبہ بندی وزیراعظم کے جمعہ کے اعلان سے کئی ماہ قبل کرلی گئی تھی۔ کسان قائدین کا کہنا ہے کہ احتجاج‘ اقل ترین امدادی قیمت (ایم ایس پی) قانون بننے اور مرکزی مملکتی وزیر اجئے مشرا کی برطرفی تک جاری رہے گا۔

بھارتیہ کسان یونین کے قومی ترجمان راکیش ٹکیت نے اتوار کے دن ہندی میں ٹوئٹ کیا کہ  ایم ایس پی ادھیکار کسان مہا پنچایت کے لئے چلو لکھنؤ‘ چلولکھنؤ جن زرعی اصلاحات کی باتیں ہورہی ہیں وہ فرضی اور بناوٹی ہیں۔ زرعی اصلاحات سے کسانوں کی حالت زار رکنے والی نہیں۔ کسان اور زراعت کے لئے سب سے بڑی اصلاح ایم ایس پی قانون بنانا ہوگی۔

نائب صدر بی کے یو اترپردیش ہرنام سنگھ ورما نے پی ٹی آئی سے کہاکہ وزیراعظم نے 3 زرعی قوانین رد کرنے کا اعلان کیا لیکن انہوں نے یہ نہیں کہا کہ  ایم ایس پی قانون کب بنے گا۔ ایم ایس پی قانون بننے اور مرکز و مملکتی وزیر داخلہ اجئے مشرا کی برطرفی تک احتجاج جاری رہے گا۔ ورما نے کہاکہ کسانوں کی مہا پنچایت میں دیگر مسائل بھی زیربحث آئیں گے۔

 بی جے پی نے یو پی کے پچھلے اسمبلی الیکشن میں کہا تھا کہ ریاست میں اس کی حکومت بن جائے تو گنا کسانوں کو 14 دن میں ادائیگی ہوجائے گی لیکن ریاست میں ایسا نہیں ہوا۔ ساڑھے 4 سال میں گنے کے دام صرف 25 روپے بڑھے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.