بیٹے کی موجودگی کا ثبوت ملا تو استعفیٰ دے دوں گا: اجئے مشر

اجئے مشر نے کہا کہ چشم دیدوں کے مطابق وہاں سے گذررہی گاڑیوں پر پتھراؤ کیا گیا جس سے ڈرائیور نے گاڑی سے کنٹرول کھو دیا اور یہی حادثے کا سبب بنا۔ تلوار اور لاٹھیوں سے لیس بھیڑ نے ڈرائیور سمیت چار لوگوں کی پیٹ پیٹ کر قتل کردیا۔

لکھنؤ: اترپردیش کے ضلع لکھیم پور کھیری میں پیش آئے تشدد میں نامزد آشیش مشرا کا بچاؤ کرتے ہوئے مرکزی مملکتی وزیر برائے داخلہ اور مقامی رکن پارلیمان اجئے مشر ٹینی نے منگل کو دعوی کیا ہے کہ ان کا بیٹا موقع واردات پرموجود نہیں تھا اور اگر ان کی موجودگی کے ثبوت ملتے ہیں تو وہ استعفی دینے کو تیار ہیں۔

مشر نے میڈیا نمائندوں سے بات چیت میں کہا کہ تکونیا تراہے پر پیش آیا واقعہ افسوسناک ہے اور وہ اس ضمن میں جانچ ایجنسیوں کو تعاون دینے کے لئے تیار ہیں لیکن ان کا بیٹا موقع واردات سے تین کلو میٹر دور دنگل کے پروگرام کی تیاریوں میں مصروف تھا اور اس کا اس جھڑپ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ واقعہ کی کئی ویڈیو اب تک سامنے آئی ہیں اور کسی میں بھی ان کے بیٹے کی موجودگی کا ثبوت نہیں ہے۔ واقعہ کے وقت کئی لوگ ویڈیو بنا رہے ہونگے اور ان میں سے کوئی ان کے بیٹے کی موقع واردات پر موجودگی کے ثبوت دے دے تو وہ فورا استعفی دے دیں گے۔ سچائی یہی ہے کہ ان کے بیٹے کو سازش کے تحت پھنسایا جارہا ہے مگر انہیں قانون پر پورا یقین ہے۔

مقامی رکن پارلیمان نے کہا کہ وہ اور ان کا بیٹا جانچ ایجنسیوں کوہر ممکن تعاون دیں گی تاکہ اصلی گنہگاروں کو ان کے کئے کی سزا مل سکے۔ انہوں نے کہا کہ ہزاروں کی بھیڑ میں کوئی چند کسانوں کو روند کر کیسے بچ کرنکل سکتا ہے۔ ویڈیو میں دکھ رہا ہے واقعہ کے بعد بھیڑ نے کار ڈرائیو رکو پیٹ پیٹ کر مار ڈالا۔ اگر ان کا بیٹا کار میں ہوتا تو وہ بھی بچ کر نہیں نکل سکتا تھا۔

انہوں نے کہا کہ چشم دیدوں کے مطابق وہاں سے گذررہی گاڑیوں پر پتھراؤ کیا گیا جس سے ڈرائیور نے گاڑی سے کنٹرول کھو دیا اور یہی حادثے کا سبب بنا۔ تلوار اور لاٹھیوں سے لیس بھیڑ نے ڈرائیور سمیت چار لوگوں کی پیٹ پیٹ کر قتل کردیا۔

ذریعہ
یواین آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.