یوپی میں 5 چیف منسٹر اور 20 ڈپٹی چیف منسٹرس کا وعدہ: راج بھر

جھانسی میں ”کھانگر“ برادری کے زیراہتمام ایک پروگرام سے خطاب کرتی ہوئے انہوں نے کہا کہ ”حکومت کی 5 سالہ میعاد کے دوران ہر سال ایک چیف منسٹر ہوگا۔ ان تمام چیف منسٹرس کا تعلق پسماندہ طبقات سے ہوگا۔

جھانسی (اترپردیش) : اترپردیش کے سابق وزیر اور سہیل دیو بھارتیہ سماج (ایس ڈی بی ایس) اوم پرکاش راج بھر نے بظاہر عجیب و غریب بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ 2002ء کے اسمبلی انتخابات کے بعد اگر ریاست میں بھاگیہ داری سنکلپ مورچہ کی حکومت تشکیل پاتی ہے تو 5 چیف منسٹر اور 20 ڈپٹی چیف منسٹر ہوں گے، جس سے سماج کے تمام طبقات کی نمائندگی ہوگی۔

جھانسی میں ”کھانگر“ برادری کے زیراہتمام ایک پروگرام سے خطاب کرتی ہوئے انہوں نے کہا کہ ”حکومت کی 5 سالہ میعاد کے دوران ہر سال ایک چیف منسٹر ہوگا۔ ان تمام چیف منسٹرس کا تعلق پسماندہ طبقات سے ہوگا۔

اسی طرح ہمارے پاس 20 ڈپٹی چیف منسٹرس ہوں گے، جو سماج کے مختلف کمزور طبقات کی نمائندگی کریں گے۔ راج بھر نے اپنے ایک بیان کی مزید وضاحت کرتے ہوئے کہاکہ جب یوپی میں مکمل اکثریتی حکومت میں 2 ڈپٹی چیف منسٹر، آندھرا پردیش میں 5 اور بہار میں 2 ڈپٹی چیف منسٹر ہوسکتے ہیں تو کیوں نہ تمام پسماندہ طبقات کو نمائندگی دی جائے جنہیں اب تک نظرانداز کیا جاتا رہا ہے؟

انہوں نے کہا کہ اگر ہم نے چھوٹے اور محروم طبقات کی نماندگی کرنے والی جماعتوں کے ساتھ اتحاد کیا ہے جن کے مفادات کو ابھی تک کچلا جارہا ہے، اس لیے اب حکومت بنانے کی ان کی باری ہے۔

راج بھر نے کہا کہ اس اتحاج کا مشترکہ ایجنڈا میں پورے پانچ سال تک گھریلو استعمال کے لیے مفت برقی سربراہی شامل ہے۔ علاوہ ازیں ہم ریاست میں ذات پر مبنی مردم شماری کو یقینی بنائیں گے اور خواتین کو 33 فیصد تحفظات فراہم کریں گے۔

انہوں نے بی جے پی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک ڈوبتی ہوئی کشتی ہے، جو قبل ازیں صرف میری اور انوپریہ پٹیل کی وجہ سے جیتی ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.