کسی مذہب کو دہشت گردی سے نہ جوڑا جائے

گروپ کے ممالک نے ورچول اجلاس میں جس کی صدارت وزیراعظم نریندرمودی نے کی افغانستان کی صورتحال کے بشمول ابھرتے ہوئے مسائل پر وسیع تر تبادلہ خیال کیا گیا۔

نئی دہلی: پانچ رکنی گروپ برکس نے آج کہا کہ افغانستان کے علاقہ کا استعمال دیگر ممالک کے خلاف دہشت گرد حملوں کیلئے نہ کیا جائے اور پرزور مطالبہ کیا کہ دہشت گردی کی تمام شکلوں بشمول دہشت گردوں کی سرحد پار نقل و حرکت کی روک تھام کی جائے۔

گروپ کے ممالک نے ورچول اجلاس میں جس کی صدارت وزیراعظم نریندرمودی نے کی افغانستان کی صورتحال کے بشمول ابھرتے ہوئے مسائل پر وسیع تر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ہندوستانی کی میزبانی میں منعقدہ اس میٹنگ میں روسی صدر ولادیمیر پوٹین، چینی صدر زی جنپنگ، جنوبی افریقہ کے صدر کرل راماپھوسا اور برازیل کے جیرولسانارو نے شرکت کی۔

برکس ممالک نے کہا کہ سرحد پار دہشت گردی سے لڑنا اور افغانستان میں منشیات کے کاروبار کو روکنا ان کی ترجیح ہے۔

سربراہ کانفرنس کے بعد جاری بیان میں برکس رہنماؤں نے تشدد سے دور رہنے اور افغانستان میں صورتحال کے پرامن حل کی اپیل کی۔

تمام ممالک نے گزشتہ ماہ حامد کرزئی کابل بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب دہشت گرد حملوں کی شدید مذمت کی۔ اس حملے میں کئی افراد ہلاک اور کئی زخمی ہوئے تھے۔

وزیراعظم مودی نے اپنے افتتاحی ریمارکس میں کہا کہ انہیں اپنی چیرمین شپ کے دوران برکس کے تمام شراکت داروں سے مکمل تعاون حاصل ہوا ہے اور گروپ نے کئی کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ انہوں نے کہا ”ہم نے برکس ممالک کے دہشت گردی سے متعلق لائحہ عمل بھی اختیار کیا ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.