بھارت کے 100 ارب پتیوں میں تین مسلمان شامل

فہرست میں شامل زائد ام 80 فیصد ارکان کی قسمت چمکی ہے۔ فہرست میں شامل 61 ارب پتیوں کی دولت میں ایک بلین ڈالر یا اس سے زائد کا اضافہ ہوا ہے۔

حیدرآباد: بھارت کے 100 دولت مندوں کی مجموعی آمدنی 775 بلین ڈالرس تک پہنچ گئی۔ کورونا وباء کے دوران جہاں عام بھارتیوں کی معاشی حالت دگر گوں ہوگئی وہیں ان ارب پتیوں کی دولت میں 2020 ء سے 257 بلین ڈالرس تک اضافہ ہوا ہے جو 50 فیصداضافہ کو ظاہر کرتا ہے۔

فہرست میں شامل زائد ام 80 فیصد ارکان کی قسمت چمکی ہے۔ فہرست میں شامل 61 ارب پتیوں کی دولت میں ایک بلین ڈالر یا اس سے زائد کا اضافہ ہوا ہے۔ریلائنس انڈسٹریز کے مالک و صدرنشین مکیشن امبانی92.7 بلین ڈالرس نقد مالیت کے ساتھ مکیش امبانی بھارتی ارب پتی تاجرین و صنعتکاروں کی فہرست میں اول مقام پر ہیں۔ ان کی دولت میں 2020 ء سے 4 بلین ڈالرس کا اضافہ ہوا ہے۔

وہ متواتر 14 ویں مرتبہ 2008 ء سے بھارتی دولت مندوں کی فہرست میں اول مقام حاصل کرتے آرہے ہیں۔ ان کے بعداڈانی پورٹس اینڈ اسپیشل اکنامک زون کے گوتم اڈانی کا نمبر آتا ہے جن کی نقد مالیت 74.8 بلین ڈالر س ہے جو گزشتہ برس 25.2 بلین ڈالرس تھی۔ اڈانی کی دولت میں صرف دو برسوں میں 49.5 بلین ڈالرس کا اضافہ ہوا ہے جو تقریباً 200 فیصد اضافہ کو ظاہر کرتا ہے۔

بھارت کے 100 دولت مندوں کی دولت میں جتنا اضافہ ہوا ہے اس کا پانچواں حصہ صرف ان کے کھاتہ میں جاتا ہے۔ تیسرے نمبر پر 31 بلین ڈالرس کی مالیت کے ساتھ ایچ سی ایل ٹیکنالوجیز کے شیو نادرہیں۔ دیگر ٹاپ 10 میں ایونیوسوپرمارٹس کے رادھا کشن دامانی (29.4 بلین ڈالرس)، سیرم انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا کے سائرس پونا والا (19 بلین ڈالرس)، آرسیلر متل کے لکشمی متل (18.8 بلین ڈالرس)، او پی جندال گروپ کی ساوتری جندال (18 بلین ڈالرس)، کوٹک مہندرا بینک کے ادے کوٹک (16.5 بلین ڈالرس) شاہپورجی پالونجی گروپ کے پالونجی مستری (16.4 بلین ڈالرس) اور آدتیہ برلا گروپ کے کمار برلا(15.8 بلین ڈالرس) شامل ہیں۔

صرف ان دس افراد کی مجموعی دولت 332 بلین ڈالرس ہے جو سال 2002 ء میں 209.3 بلین ڈالرس تھی۔ سو دولت مند بھارتیوں کی فہرست میں صرف تین مسلمان وپرو کے عظیم پریم جی (7.9 بلین ڈالرس)، لولو گروپ انٹرنیشنل کے ایم اے یوسف علی (4.45 بلین ڈالرس) اور سپلا دواساز کمپنی کے یوسف حمید (3.3 بلین ڈالرس) ہی اپنی جگہ بنا پائے ہیں۔ دامانی کی دولت بھی ایک سال تقریباً دگنی ہوئی ہے۔

ساوتری جندال نے پہلی مرتبہ ٹاپ 10 کلب میں جگہ بنائی ہے جن کی دولت جو ایک برس قبل 6.6 بلین ڈالرس تک جاریہ سال 18 بلین ڈالرس تک پہنچ گئی۔ جاریہ سال کی فہرست میں 6 نئے لوگ شامل ہوئے ہیں جن میں نصف کا تعلق کیمیکلس شعبہ سے ہے۔

ڈائیگناسٹک چین ڈاکٹر لال پاتھ لیابس کے ایکزیکیٹیو چیرمین اروند لال نے بھی وباء کے پھیلاؤ کے بعد پہلی مرتبہ فہرست میں جگہ بنائی ہے جو 2.55 بلین ڈالرس کی دولت کے ساتھ 87 ویں مقام پر ہیں۔ ملک کے نوجوان ارب پتیوں میں بایئجوس کے دیویاگوکول ناتھ(4.05 بلین ڈالرس دولت کے ساتھ 47 واں مقام)اورزیرودھا بروکنگ کے نکھل کامت (2.59 بلین ڈالرس کے ساتھ 86 واں مقام) شامل ہیں، ان دونوں کی عمر 35 برس ہے۔ پلونجی مستری اور گجرات فلوروکیمیکلس کے دیویندر جین سب سے عمر رسیدہ ہیں جن کی عمریں 92 ہے۔

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.