نئی ڈیجیٹل ٹکنالوجی جمہوری، انسانی اقدارپرمرکوز ہو:مودی

مودی نے کہا کہ انہیں سڈنی ڈائیلاگ میں مدعو کرنا نہ صرف ہندوستان کے لئے ایک اعزاز ہے بلکہ یہ ہند بحرالکاہل خطے اور ابھرتی ہوئی ڈیجیٹل دنیا میں ہندوستان کے مرکزی کردار کا اعتراف بھی ہے۔

نئی دہلی: وزیر اعظم نریندر مودی نے آج جمہوری ممالک سے اپیل کی کہ وہ اس امر کو یقینی بنانے مل جل کر کام کریں کہ کرپٹو کرنسی غلط ہاتھوں میں نہ جائے۔انہوں نے ہم خیال ممالک پر اس بات کو اجاگر کیا کہ ڈیجیٹل انقلاب کے چیلنجس سے متحدہ طور پر نمٹنے کی ضرورت ہے۔ سڈنی ڈائیلاگ سے ورچول خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ٹکنالوجی اور ڈاٹا نئے ہتھیار بن رہے ہیں اور ممالک کو یہ ہی فیصلہ کرنا ہوگا کہ ٹکنالوجی کی تمام شاندار طاقتیں تعاون یا تصادم‘ جبر یا پسند کے آلات بنیں اور تمامتر ترقی اسی پر منحصر ہوگی۔

 یو این آئی کے بموجب وزیر اعظم نریندر مودی نے دنیا میں ہو رہے ڈیجیٹل انقلاب میں جمہوری اقدار کے ناگزیر ہونے پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہندوستان میں ڈیجیٹلائزیشن کے ذریعہ گورننس، شمولیت، بااختیار بنانے، رابطے اور فوائد کی منتقلی اور فلاحی اقدامات میں زبردست تبدیلیاں آرہی ہیں۔ وزیر اعظم مودی نے پہلے سڈنی ڈائیلاگ میں کلیدی بیان میں سائبر ورلڈ کے موضوع پر بات کرتے ہوئے آگاہ کیا کہ مستقبل میں تکنیک کے تعلق سے دنیا کے تمام جمہوری ممالک کو انسانی اقدار کا خیال رکھنا ہوگا اور ٹیکنالوجی کے غلط استعمال کے امکانات سے نوجوان نسل کو بچانا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ انہیں سڈنی ڈائیلاگ میں مدعو کرنا نہ صرف ہندوستان کے لئے ایک اعزاز ہے بلکہ یہ ہند بحرالکاہل خطے اور ابھرتی ہوئی ڈیجیٹل دنیا میں ہندوستان کے مرکزی کردار کا اعتراف بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈیجیٹل دنیا میں ہمارے ارد گرد ہرچیز بدل رہی ہے۔ اس نے سیاست، معیشت اور معاشرے کی نئی تعریف کی ہے اور خودمختاری، حکمرانی، اخلاقیات، قانون، حقوق اور سلامتی کے بارے میں نئے سوالات اٹھائے ہیں۔ اس سے بین الاقوامی مسابقت، طاقت اور قیادت کو بھی نئے سرے سے ایک نئی شکل دی ہے۔ ہندوستان میں ڈیجیٹل ٹکنالوجی کی وجہ سے پانچ اہم تبدیلیوں کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ہم دنیا کے سب سے زیادہ جامع عوامی معلومات کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کر رہے ہیں۔

 1.3 ارب ہندوستانیوں کے پاس ایک ڈیجیٹل شناخت ہے۔ ہم چھ لاکھ مواضعات کو براڈ بینڈ سے جوڑنے جا رہے ہیں۔ دوسرا- ہم ڈیجیٹل تکنیک کے ذریعہ حکمرانی، شمولیت، بااختیار بنانے، کنیکٹیویٹی، فوائداورفلاحی اقدامات کی منتقلی کے ذریعے عوام کی زندگیوں کو بدل رہے ہیں۔ تیسرا – ہندوستان میں اب تک کا تیسرا سب سے تیزی سے ترقی کرنے والا اسٹارٹ اپ ماحولیاتی نظام ہے۔ ہر ہفتے نئے نئے یونیکورنس آ رہے ہیں اور وہ صحت وتعلیم سے لے کر قومی سلامتی تک ہر شعبے میں حل فراہم کر رہے ہیں۔ چوتھا – ہندوستان کی صنعت اور خدمات کے شعبے، خاص طور پر زراعت کے شعبے میں، بہت وسیع تبدیلیاں ہورہی ہیں۔ ہم صاف توانائی، وسائل اور حیاتیاتی تنوع کے تحفظ کے لیے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کا استعمال کر رہے ہیں۔ پانچواں – ہندوستان کو مستقبل کے لیے تیار کرنے کے لیے بہت بڑی سطح پر کوششیں جاری ہیں۔ ہم 5 جی اور6جی جیسی ٹیلی کام ٹیکنالوجی میں مقامی صلاحیتوں کو فروغ دینے میں سرمایہ کاری کر رہے ہیں۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.