کملا ہیریس سے مودی کی ملاقات

یہ تاریخی لمحہ تھا۔ دونوں نے ماسک (مودی نے سفید اور کملا ہیریس نے سیاہ) لگارکھے تھے۔ کملا ہیریس بلیک اینڈ وائٹ پینٹ سوٹ میں ملبوس تھیں جبکہ مودی نے کرتا پائجامہ کے ساتھ نہرو جیاکٹ پہن رکھی تھی۔

نیویارک: امریکہ کی پہلی ہندوستانی امریکی نائب صدر کملا ہیریس نے جمعرات کی سہ پہر 3:19 بجے وزیراعظم ہند نریندر مودی کا اپنی قیام گاہ (پنسلوانیہ ایو)پر خیرمقدم کیا۔ 2020 کے الیکشن میں نائب صدر بننے کے بعد ان کی مودی سے یہ پہلی ملاقات تھی۔

یہ تاریخی لمحہ تھا۔ دونوں نے ماسک (مودی نے سفید اور کملا ہیریس نے سیاہ) لگارکھے تھے۔ کملا ہیریس بلیک اینڈ وائٹ پینٹ سوٹ میں ملبوس تھیں جبکہ مودی نے کرتا پائجامہ کے ساتھ نہرو جیاکٹ پہن رکھی تھی۔

کملا ہیریس نے مودی سے کہا کہ میرے خیال میں کم ازکم 16 ماہ کے بعد جنوبی ایشیا کے باہر یہ آپ کا پہلا دورہ ہے۔ جو بائیڈن کی نائب کملا ہیریس نے کواڈ چوٹی کانفرنس سے قبل مودی سے ملاقات کی۔ مودی نے کملا ہیریس کو ہندوستان آنے کی دعوت دی اور کہا کہ ہندوستان آپ کا منتظر ہے۔

کملا ہیریس کی ماں شیاملا گوپالن 1958 میں 19 سال کی عمر میں اکیڈیمک اسکالرشپ پر امریکہ پہنچی تھیں۔ مودی نے کہا کہ 40 لاکھ سے زائد ہندوستانی نژاد افراد ہندوستان اور امریکہ کے درمیان دوستی کا پل بنے ہوئے ہیں۔

امریکی نائب صدرنے وزیراعظم ہند سے کہا کہ وہ پاکستان سے کہہ رہی ہیں کہ وہ دہشت گردی کے خلاف کارروائی کرے۔ وہ یہ یقینی بنائے کہ دہشت گرد گروپس نئی دہلی یا واشنگٹن کو نشانہ نہ بنائیں۔

ہندوستان کے معتمد خارجہ ہرش وردھن شرنگلا نے یہ بات بتائی۔ انہوں نے کہا کہ جمعرات کی میٹنگ میں جب دہشت گردی کا مسئلہ زیربحث آیا تو امریکی نائب صدر نے ازخود پاکستان کے رول کا حوالہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ وہاں دہشت گرد گروپس سرگرم ہیں۔

انہوں نے پاکستان سے کہا کہ وہ ان گروپس کے خلاف کارروائی کرے تاکہ وہ امریکہ اور ہندوستان کی سلامتی پر اثراندازنہ ہوسکیں۔ دونوں قائدین کی واشنگٹن میں ملاقات کے بعد ہرش وردھن شرنگلا نے کہا کہ اس خوشگوار ملاقات میں بڑی گرمجوشی رہی۔

وائٹ ہاؤز سے جاری بیان میں کہا گیا کہ مودی اور کملا ہیریس نے جدید خطرات بشمول دہشت گردی اور سائبر جرائم کے مدنظر باہمی سیکوریٹی تعاون بڑھانے کی تائید کی۔ کملا ہیریس اور ان کی ڈیموکریٹک پارٹی کے بعض حامیوں نے مودی پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ جمہوریت کا صفایا کررہے ہیں۔

ہندوستانی وزارت خارجہ نے جو بیان جاری کیا اس میں ایسا کوئی تذکرہ نہیں کہ کل کی ملاقات میں جمہوریت پر کوئی بات چیت ہوئی ہو۔ پی ٹی آئی کے بموجب وزیراعظم مودی نے امریکی نائب صدر کو ان کے نانا سے متعلق پرانے اعلامیوں کی ایک کاپی پیش کی جو حکومت ہند کے سینئر عہدیدار تھے۔ یہ کاپی لکڑی کے بڑے ہینڈی کرافٹ فریم میں پیش کی گئی۔

انہوں نے کملا ہیریس کو میناکاری شطرنج سٹ بھی پیش کیا۔ سرکاری ذرائع نے جمعہ کے دن یہ بات بتائی۔ وزیراعظم نے ہندوستان اور امریکہ کو ”فطری شراکت دار“ قراردیا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ کملا ہیریس کے ساتھ وزیراعظم کی باہمی ملاقات نہایت کامیاب رہی۔ انہوں نے امریکی نائب صدر کو نہایت خاص تحفے تحائف پیش کئے۔

مودی نے ایک گلابی میناکاری شطرنج سٹ پیش کیا۔ گلابی میناکاری وارانسی شہر سے جڑی ہے اور یہ شہر‘وزیراعظم کا حلقہ لوک سبھا ہے۔ آسٹریلیا کے وزیراعظم اسکاٹ موریسن کو سلور گلابی میناکاری جہاز اور جاپانی وزیراعظم کو صندل کی لکڑی کا بنا گوتم بدھ کا مجسمہ پیش کیا گیا۔

مودی چہارشنبہ کے دن امریکہ کے سرکاری دورہ پر واشنگٹن پہنچے تھے۔ ان کی آمد کواڈ چوٹی کانفرنس میں شرکت اور اقوام متحدہ جنرل اسمبلی اجلاس سے خطاب کے لئے ہوئی ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.