گجرات میں 100 قبائلیوں کا قبول اسلام‘ 4 افراد گرفتار

دوران وڈودرہ پولیس نے بھڑوچ پولیس کو جانکاری دی کہ عمر گوتم اور صلاح الدین شیخ (منیجنگ ٹرسٹی‘ اے ایف ایم آئی چیریٹیبل ٹرسٹ وڈودرہ) بھڑوچ میں چلنے والے اس ریاکٹ میں ملوث ہیں۔

بھڑوچ: گجرات میں چہارشنبہ کے دن 4  افراد کو ضلع بھڑوچ کے تعلقہ امود کے ایک گاؤں میں 100 قبائلیوں کو بیرونی فنڈس کے ذریعہ مسلمان بنانے کے الزام میں گرفتار کیا گیا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ دہلی کے رہنے والے محمد عمر گوتم اور اس کا ساتھی صلاح الدین شیخ (وڈودرہ)‘ اصل ملزم عبداللہ فیفڈاوالا کے رابطہ میں تھے۔ فیفڈاوالا‘ بھڑوچ کے بنی پور کا رہنے والا ہے اور فی الحال لندن میں رہ رہا ہے۔ عمر گوتم اور صلاح الدین فی الحال وڈودرہ جیل میں ہیں۔ 15  نومبر کو بھڑوچ ضلع پولیس نے 9  افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کی تھی۔ ان میں 4 کو چہارشنبہ کے دن گرفتار کیا گیا۔ بھڑوچ کے ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس ایم پی بھوجانی نے یہ بات بتائی۔

 گرفتار ملزمین کے نام عبدالعزیز پٹیل‘ یوسف پٹیل‘ ایوب پٹیل اور ابراہیم پٹیل بتائے گئے ہیں۔ یہ سبھی موضع کنکریہ کے رہنے والے ہیں۔ اصل ملزم عبداللہ فیفڈاوالا سابق میں کئی مرتبہ بھڑوچ آچکا ہے۔ فیفڈاوالا نے جو بیرونی فنڈس جمع کرکے بھیجے‘ مقامی ملزمین نے انہیں استعمال کرکے لگ بھگ 100 واسوا ہندوؤں کو مسلمان بنایا۔ یہ ریاکٹ گزشتہ 15 برس سے جاری ہے۔ ملزمین غریب قبائلیوں کو پیسہ‘ غذا‘ نوکریوں‘ کپڑوں اور تعلیم کا لالچ دیتے تھے۔

 اسی دوران وڈودرہ پولیس نے بھڑوچ پولیس کو جانکاری دی کہ عمر گوتم اور صلاح الدین شیخ (منیجنگ ٹرسٹی‘ اے ایف ایم آئی چیریٹیبل ٹرسٹ وڈودرہ) بھڑوچ میں چلنے والے اس ریاکٹ میں ملوث ہیں۔ گزشتہ ماہ وڈودرہ پولیس بیرونی فنڈس کے بے جا استعمال کی تحقیقات کے دوران انہیں یوپی سے یہاں لے آئی۔ وڈودرہ سٹی کرائم برانچ کی تحقیقات میں پتہ چلا ہے کہ فیفڈاوالا نے ایف سی آر اے اور حوالہ کے ذریعہ شیخ کو 80 کروڑ روپے بھیجے تھے۔ شیخ نے اس رقم سے گجرات کے سرحدی علاقوں میں مسجدیں تعمیر کرائیں اور لوگوں کو مسلمان بنایا۔ اس نے ملک کے دیگر حصوں میں سی اے اے کے خلاف مظاہروں کے لئے بھی پیسہ دیا۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.