یوپی الیکشن: ممتابنرجی‘ سماج وادی پارٹی سے اتحاد کی خواہاں

پارٹی قیادت چاہتی ہے کہ یو پی میں 2024کے اسمبلی الیکشن سے قبل مضبوط یونٹ بنے۔ ہم جہاں بھی جاتے ہیں لوگ ہم سے پوچھتے ہیں کہ ہم نے مغربی بنگال میں بی جے پی کو کیسے ہرایا۔

لکھنو: ترنمول کانگریس‘ اترپردیش اسمبلی الیکشن میں جو آئندہ سال کے اوائل میں ہوگا سماج وادی پارٹی کے اتحاد پر غور کر رہی ہے۔ اس سلسلہ میں فیصلہ دونوں جماعتوں کے قائدین آنے والے ہفتوں میں کرسکتے ہیں۔ ترنمول کانگریس نے اترپردیش میں پہلی بھیت سے اپنا عوامی رابطہ پروگرام شروع کردیا ہے جہاں اس نے گنا کسانوں کے بقایا کے مسئلہ پر احتجاج کیا۔ 18ڈیویژنس میں ہر ڈیویژن کے کم از کم 2اضلاع کا احاطہ کیا جائے گا تاکہ عوام کا موڈ بھی نپا جائے۔

 ترنمول کے ریاستی صدر نیرج رائے نے کہا کہ ہم عوام کو بتائیں گے کہ مغربی بنگال میں ہم کو کسی پالیسیوں پر عمل درآمد کر رہے ہیں۔ ہم ریاستی حکومت کی فلاحی پالیسیوں کے تعلق سے عوام کی رائے معلوم کریں گے۔ ہم عوام کی توقعات کی بنیاد پر ترنمول کانگریس کا منشور تیار کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ترنمول‘ مضبوط تنظیمی ڈھانچہ اور کیڈر بنیاد بتانے پر توجہ مرکوز کر رہی ہے۔

 نیرج رائے نے کہا کہ پارٹی نے مئی میں شروع رکنیت سازی مہم کے ذریعہ 30اضلاع میں 100پابند عہد ارکان جوڑے ہیں۔ پارٹی قیادت چاہتی ہے کہ یو پی میں 2024کے اسمبلی الیکشن سے قبل مضبوط یونٹ بنے۔ ہم جہاں بھی جاتے ہیں لوگ ہم سے پوچھتے ہیں کہ ہم نے مغربی بنگال میں بی جے پی کو کیسے ہرایا۔

 سماج وادی پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ ترنمول سے اتحاد ہوسکتا ہے کیونکہ اکھلیش یادو کو چیف منسٹر مغربی بنگال اور ترنمول کانگریس سربراہ ممتابنرجی کی تائید حاصل ہے۔ سماج وادی پارٹی کے ایک ترجمان نے کہا کہ ممتابنرجی‘ اپوزیشن کی وہ علامت ہیں جس نے تمام رکاوٹوں کے باوجود فرقہ پرست طاقتوں کو کچل دیا۔ یو پی میں ان کی مہم سے اپوزیشن کو عام طورپر تقویت یقینی ملے گی۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.