منگل گیری میں نائیڈو کے 36 گھنٹوں کے احتجاج کا آغاز

سنٹرل آفس کے بشمول ریاست کے کئی مقامات پر ٹی ڈی پی پارٹی دفاتر پر حکمراں جماعت وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے حامیوں کے مبینہ حملوں کے خلاف نائیڈو، نے یہ احتجاج شروع کیا ہے۔

امراوتی: تلگودیشم پارٹی کے صدر این چندرا بابو نائیڈو نے جمعرات کے روز سے منگل گیری میں پارٹی کے سنٹرل دفتر میں 36 گھنٹوں طویل بیٹھے رہو احتجاج کا آغاز کیا ہے۔

سنٹرل آفس کے بشمول ریاست کے کئی مقامات پر ٹی ڈی پی پارٹی دفاتر پر حکمراں جماعت وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے حامیوں کے مبینہ حملوں کے خلاف نائیڈو، نے یہ احتجاج شروع کیا ہے۔

انہوں نے ڈرگس مافیا، غیر جمہوری اور فسطائی حکمرانی سے آندھرا کے عوام کو بچانے کیلئے مرکز سے مداخلت، کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر نے ایک بار پھر کہا کہ ریاست میں آرٹیکل356کو لاگو کیا جانا چاہئے۔

آندھرا پردیش کی موجودہ صورتحال ریاست میں صدر راج کے نفاذ کیلئے انتہائی موزوں ہے۔ ٹی ڈی پی دفاتر پر حملوں کے خلاف سابق چیف منسٹر نے پارٹی کے مرکزی دفتر میں 36گھنٹوں تک بیٹھے رہو احتجاج کا آغاز کیا ہے۔

نائیڈو کا یہ احتجاج جمعہ کی رات 8 بجے تک جاری رہے گا۔ پارٹی کیڈر اور قائدین سے خطاب کرتے ہوئے نائیڈو نے کہا کہ آندھرا پردیش گانجہ مافیا کا مرکز بنتا جارہا ہے۔ یہ سرگرمیاں نہ صرف ریاست بلکہ تلنگانہ، یو پی، مہاراشٹرا، گجرات، کرناٹک اور دیگر ریاستوں تک پھیل چکی ہیں، ریاست میں اسٹیٹ دہشت گردی انتہاکو پہنچ چکی ہے۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.