وزیراعظم مودی کا فیصلہ درست: چندرا بابو نائیڈو

چندرابابونائیڈونے کہاکہ نریندرمودی کے فیصلہ کومدنظر رکھتے ہوئے حکومت آندھراپرد یش کوبھی کسانوں کے مفاد میں تین صدر مقامات کے فیصلہ سے دستبردارہوناچاہئے جو امراوتی کے کسانوں اورریاست کے عوام کی دلی خواہش ہے جس کی تکمیل کی جانی چاہئے۔

امراوتی: تلگودیشم پارٹی کے قومی صدرو آندھرپردیش کے سابق چیف منسٹر این چندرا بابونائیڈوجمعہ کے روز وزیر اعظم نریندر مودی کے اس فیصلہ کاخیرمقدم کیاجس میں مودی نے متنازعہ تین زرعی قوانین کومنسوخ کرنے کا اعلان کیاہے۔نائیڈونے کہاکہ ان کے قوانین کے خلاف ملک بھرمیں کسان سرتاپا احتجاج بنے ہوئے ہیں اس تناظر میں متنازعہ زرعی قوانین کی تنسیخ سے متعلق وزیر اعظم کافیصلہ انتہائی درست ہے۔

اپنے بیان میں چندرابابونائیڈونے کہاکہ نریندرمودی کے فیصلہ کومدنظر رکھتے ہوئے حکومت آندھراپرد یش کوبھی کسانوں کے مفاد میں تین صدر مقامات کے فیصلہ سے دستبردارہوناچاہئے جو امراوتی کے کسانوں اورریاست کے عوام کی دلی خواہش ہے جس کی تکمیل کی جانی چاہئے۔ ریاست میں دولت کی تخلیق اور روزگارکے مواقع کے فروغ میں امرواتی اہم رول ادا کرے گا۔ ٹی ڈی پی کے سربراہ نے کہاکہ امراوتی کے کسان گذشتہ 700 دنوں سے احتجاج کررہے ہیں اوران کسانوں نے خوابوں کے شہر ریاست کے صدرمقام امراوتی کی تعمیر کے لئے 34ہزار ایکڑ اراضی کوقربان کردیاہے۔

امراوتی کے کسانوں کی مہاپدیاترا پر بحیثیت مجموعی بہتر ردعمل سامنے آرہا ہے۔نائیڈو کے مطابق  اس وقت کے قائد اپوزیشن نے اسمبلی میں ریاست کے نئے صدرمقام کے طورپر امراوتی کی تعمیر پر مکمل تائیدوحمایت کی تھی اوریہ بھی کہاتھا کہ 3 ہزار ایکڑپرریاست کانیا صدرمقام تعمیر کیاجانا چاہئے۔

اسمبلی میں تمام ارکان نے امراوتی کے مسئلہ پرمکمل تائیدوحمایت کی تھی۔نائیڈو نے کہاکہ اے پی میں تمام سیاسی جماعتوں نے اسمبلی میں متفقہ قرارداد منظور کرتے ہوئے یہ کہاتھا کہ صرف امراوتی ہی ریاست کا صدر مقام رہے گا۔ مختصر ترین وقت میں ریاستی حکومت نے 2لاکھ کروڑ کے روپے کے مصارف سے شہر کوفروغ دیا۔امراوتی کومکمل طورپر فروغ دینے کے بعد ریاست کے تمام 175 اسمبلی حلقوں میں روزگار کے بے پناہ مواقع وسائل دستیاب ہوئے تھے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.