ٹی ڈی پی قائدین کیخلاف درج فرضی کیسس واپس لئے جائیں:نائیڈو

ڈی جی پی گوتم سوانگ کے نام اپنے مکتوب میں چندرا بابو نائیڈونے دیندولورو کے سابق رکن اسمبلی سی پربھاکرکی گرفتاری کوغیر آئینی اور غیرجمہوری قرار دیا۔

وجئے واڑہ:تلگودیشم پارٹی کے قومی صدروسابق چیف منسٹر آندھراپردیش این چندرابابونائیڈونے آندھراپردیش کے ڈی جی پی پر زوردیا کہ وہ ٹی ڈی پی کارکنوں کے خلاف درج فرضی کیسس کوغیرمشروط طورپردستبرداری اختیار کریں۔

ریاست میں پولیس فورس کی غیر جانبداری کی کارکردگی کے ثبوت کے طورپرٹی ڈی پی قائدین کے خلاف درج فرضی مقدمات کو غیر مشروط طورپر واپس لیناہوگا۔

ڈی جی پی گوتم سوانگ کے نام اپنے مکتوب میں چندرا بابو نائیڈونے دیندولورو کے سابق رکن اسمبلی سی پربھاکرکی گرفتاری کوغیر آئینی اور غیرجمہوری قرار دیا۔

انہوں نے کہاکہ جمہوری طورپر منتخب وائی ایس آرکانگریس پارٹی عوام کو جمہوری حکومت فراہم کرنے کے بجائے ریاست میں پولیس راج قائم کرنے کے جرم کی مرتکب ہوئی ہے۔پولیس کاایک گوشہ حکومت کے خلاف آوازاٹھانے پر اپوزیشن قائدین اورعام افرادکوہراساں کررہا ہے۔

نائیڈونے کہاکہ ریاست میں مظالم‘ عصمت ریزی‘قتل کے واقعات کوروکتے ہوئے جرائم کی شرح کوکم کرنے پر توجہ دینے کے بجائے پولیس‘ اپوزیشن تلگودیشم پارٹی کے قائدین کو نشانہ بنارہی ہے۔28اگست 2021 کو اپوزیشن قائدین کیخلاف درج تمام فرضی کیسس کوفوری طورپر واپس لیناچاہئے۔

احتجاجی‘پٹرول‘ڈیزل اور اشیائے ضروریہ کی اضافی قیمتوں کوواپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے پرامن دھرنا منظم کررہے تھے۔عوام کے مفادات کے تحفظ میں ان قائدین کو صدائے احتجاج بلندکرنے کاحق حاصل ہے۔

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.