تجارت اورروزگارمیں دلتوں کوتحفظات کی فراہمی : کے سی آر

پرگتی بھون میں منعقدہ جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ حکومت کی جانب سے جن شعبوں میں خدمات کی انجام دہی کے لئے لائسنس جاری کئے جاتے ہیں ان کی نشاندہی کرتے ہوئے اُن شعبوں میں‘ اہل دلت افراد کے لئے تحفظات فراہم کئے جائیں گے۔

حیدرآباد: چیف منسٹرکے چندرشیکھرراؤ نے کہاکہ دلت طبقات  کوتجارت اور روزگارکے شعبہ میں تحفظات فراہم کئے جائیں گے۔

آج پرگتی بھون میں منعقدہ جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ حکومت کی جانب سے جن شعبوں میں خدمات کی انجام دہی کے لئے لائسنس جاری کئے جاتے ہیں ان کی نشاندہی کرتے ہوئے اُن شعبوں میں‘ اہل دلت افراد کے لئے تحفظات فراہم کئے جائیں گے۔

میڈیکل شاپس‘ فرٹیلائزر شاپس‘ می سیوا مراکز‘ گیس ڈیلر شیپس‘ ٹرانسپورٹ پرمٹس‘ماٹننگ لیزس‘سیول کنٹراکٹس‘آوٹ سورسنگ کنٹراکٹس‘بارس وائین شاپس ودیگر شعبوں میں روزگار کے حصول کے لئے دلت بندھوپروگرام کے تحت اقدامات کئے جائیں گے۔

چیف منسٹرنے واضح کیا کہ حکومت ہر طریقہ سے دلت طبقات کوخوشحال بنانے کا تہیہ کرچکی ہے۔انہوں نے عہدیداروں کو دلت بندھواسکیم اور اس پرعمل آوری کے متعلق طریقہ کارسے واقف کراتے ہوئے کہا دوسرے مرحلہ میں اسکیم پر موثرعمل آوری ضروری ہے۔

اس کام کے لئے دلت بندھو مشاورتی کمیٹیز کے ساتھ تعاون واشتراک کرنا ضروری ہے۔ہردلت فردکوخصوصی دلت بندھو اکاونٹ کھولناہوگا۔چیف منسٹر نے کہاکہ ہر دیہات‘منڈل‘اسمبلی حلقہ‘ ضلع اور ریاستی سطح پر دلت بندھوکمیٹی قائم کی جائے گی۔چیف منسٹرنے واضح کہاکہ حکومت کسی بھی طبقہ کے ساتھ امتیازی رویہ اختیارنہیں کرئے گی۔

برہمنوں کے بشمول اعلیٰ ذات کے طبقات کے غریب افراد کی نشاندہی کرتے ہوئے ان کی ترقی وخوشحالی کے لئے اقدامات کئے جائیں گے۔ذات پات کاتفرقہ کئے بغیررعیتوبندھو اسکیم سے ہرفرد کو فائدہ پہنچایا جارہاہے۔ ریاستی حکومت ہرطبقہ‘ہرپیشہ کی ترقی کے لئے کام کررہی ہے۔آج دلتوں کی ترقی کے مقصد کے تحت کام کیا جارہاہے۔

اسی سلسلہ کے تحت دلت بندھواسکیم پرتجرباتی طورپرعمل کرنے مزید چارمنڈلوں کاانتخاب کیاگیا ہے۔ چیف منسٹرنے توقع ظاہر کی کہ دلت بندھو اسکیم کو بہر صورت کامیابی سے ہمکنارکرنے ہرشہری اپنے اپنے طورپر مثالی کردارادا کرئے گا۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.