تلنگانہ میں 59 لاکھ ایکڑ پر دھان کی کاشت : ونود کمار

وزیر زراعت نے ریاستی بی جے پی قیادت سے مطالبہ کیا کہ وہ تلنگانہ عوام کو یہ بتائیں کہ گذشتہ7برسوں کے دوران ریاست کیلئے انہوں نے کیا کیا ہے۔

حیدرآباد: تلنگانہ اسٹیٹ پلاننگ بورڈ کمیشن کے وائس چیرمین بی ونود کمار نے دعویٰ کیا کہ مرکز سے حاصل ڈاٹا سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ خریف سیزن کے دوران تلنگانہ میں 59 لاکھ ایکڑ پر دھان کی کاشت کی گئی ہے۔

انہوں نے صدر ریاستی بی جے پی بنڈی سنجے سے سوال کیا کہ مرکز کی اس رپورٹ پر وہ کیا کہنا چاہئیں گے جبکہ دھان کی کاشت میں اضافہ سے متعلق چیف منسٹر کے سی آر کے بیان پر بنڈی سنجے نے تنقید کی تھی۔

ونود کمار نے بتایا کہ ریموٹ سنسنگ سنٹر کے میاپ کے مطابق جس کے ذریعہ ملک بھر میں کئے گئے سروے میں پتہ چلا ہے کہ 2.374 ملین ہیکٹر پر دھان کی کاشت کی گئی ہے جو 59 لاکھ ایکڑ کے مساوی ہے۔

اس سے 7.543 ملین ٹن دھان کی پیداوار ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب چیف منسٹر کے سی آر نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ ریاست میں 62لاکھ ایکڑ پردھان کی کاشت کی گئی ہے تو بنڈی سنجے نے کہا تھا کہ اس سلسلہ میں ثبوت پیش کرنا چاہئے۔

اب جبکہ مرکز کی ایجنسی کی رپورٹ سامنے آئی ہے تو پھر بنڈی سنجے کو اس پر کیا کہنا ہوگا گذشتہ ہفتہ کے چندر شیکھر راؤ نے پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ تلنگانہ میں 62 لاکھ ایکڑ اراضی پر دھان کی کاشت کی گئی ہے۔

اس لئے انہوں نے مرکز سے دھان خرید نے کا مطالبہ کیا تھا۔ دریں اثنا ریاستی وزیر زراعت ایس نرنجن ریڈی نے ہفتہ کے روز بی جے پی کو مشورہ دیا کہ وہ کسانوں کیلئے مسائل پیدا نہ کریں جس جماعت نے کسانوں کو پریشان کیا وہ جماعت، اقتدار سے محروم ہوئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ دھان خریدی مسئلہ پر بی جے پی کے مرکزی اور ریاستی قائدین کے بیانات میں تضاد ہے۔ وزیر زراعت نے ریاستی بی جے پی قیادت سے مطالبہ کیا کہ وہ تلنگانہ عوام کو یہ بتائیں کہ گذشتہ7برسوں کے دوران ریاست کیلئے انہوں نے کیا کیا ہے۔ انہوں نے مرکز سے ربیع سیزن میں دھان کی خریدی پر واضح پالیسی کے اعلان کا مطالبہ کیا۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.