سخت سیکوریٹی کے درمیان حضور آباد میں رائے دہی پرامن

ٹی آر ایس اور بی جے پی کارکنوں میں تصادم کے اکادکا واقعات کے سوا رائے دہی پرامن رہی۔

حیدرآباد: حلقہ اسمبلی حضور آباد کے ضمنی الیکشن میں آج ووٹ ڈالے گئے۔ ہفتہ کے روز صبح7بجے سے پرامن انداز میں رائے دہی کا آغاز ہوا۔ پولنگ بوتھس پر رائے دہندوں کی طویل قطار یں دیکھی گئیں۔ حق رائے دہی سے استفادہ کیلئے ووٹروں میں زبردست جوش وخروش دیکھا گیا۔

ٹی آر ایس اور بی جے پی کارکنوں میں تصادم کے اکادکا واقعات کے سوا رائے دہی پرامن رہی۔

بی جے پی امیدوار ایٹالہ راجندر اور ان کی اہلیہ نے حضورآباد منڈل کے موضع کندولہ میں ایک بوتھ پر حق رائے دہی سے استفادہ کیا جبکہ ٹی آر ایس امیدوار جی سرینواس یادو نے اہلیہ کے ساتھ وینا ونکا منڈل کے ہمت نگر موضع کے ایک بوتھ پر ووٹ ڈالا۔

حلقہ بھر میں مراکز رائے دہی پر صبح سے ہی رائے دہندوں کو طویل قطار میں اپنی باری کا انتظار کرتے ہوئے دیکھا گیا۔ کئی مقامات پر بی جے پی اور ٹی آ رایس کارکنوں میں بحث و تکرار دیکھی گئی۔ دونوں جماعتوں کے ورکرس نے ایک دوسرے پر ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے اور ووٹرس پر اثر انداز ہونے کی کوشش کا الزام عائد کیا۔

ٹی آر ایس امیدوار جی سرینواس یادو کے چیف الیکشن ایجنٹ کی حیثیت سے دورہ کرنے والے پی کوشک ریڈی کو بی جے پی کے کارکنوں نے غیر ضروری طور پر کئی بوتھس پر روکنے کی کوشش کی جبکہ چیف الیکشن کمشنر کی جانب سے انہیں تمام مراکز رائے دہی جانے کی اجازت ہے۔ رائے دہی کو آزادانہ، منصفانہ اور پرامن بنانے کیلئے حکام نے بڑے پیمانے پر صیانتی انتظامات کئے۔

3800 پولیس ملازمین کے علاوہ نیم فوجی دستوں کی 20 کمپنیوں کو بھی تعینات کیا گیا۔ تمام سیاسی جماعتوں کے پولنگ ایجنٹس کیلئے کووڈ ٹسٹ لازمی قرار دیا گیا ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.