نظام آباد اجتماعی عصمت ریزی واقعہ کے 3ملزمین گرفتار

نظام آباد ٹاؤن کے بس اسٹیشن کے قریب ایک ہاسپٹل کی خالی عمارت میں منگل کی شب طالبہ کی اجتماعی عصمت ریزی کا واقعہ پیش آیا تھا۔

حیدرآباد: تلنگانہ پولیس نے جمعرات کے روز نظام آباد میں ایک 20سالہ طالبہ کی اجتماعی عصمت ریزی کے واقعہ میں مبینہ طورپر ملوث 3ملزمین کو گرفتار کرلیا ہے۔

پولیس عہدیدار نے بتایا کہ مزید دو مفرور ملزمین کی تلاش جاری ہے۔ گرفتار ملزمین کو مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا گیا ہے۔

نظام آباد ٹاؤن کے بس اسٹیشن کے قریب ایک ہاسپٹل کی خالی عمارت میں منگل کی شب طالبہ کی اجتماعی عصمت ریزی کا واقعہ پیش آیا تھا۔

طالبہ کو نیم بے حوشی کی حالت میں دیکھنے کے بعد ایک شخص نے پولیس کو الرٹ کیا تھا۔ متاثرہ کو ضلعی ہاسپٹل منتقل کیا گیا جہاں طبی جانچ میں طالبہ کے ساتھ جنسی زیادتی کی توثیق ہوئی ہے۔

پولیس نے نربھئے ایکٹ‘ ایس سی ایس ٹی ایکٹ کے تحت کیس درج کرتے ہوئے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔ پولیس نے شبہ ظاہر کیا کہ جرم کے ارتکاب سے قبل ملزمین نے طالبہ کو نشہ آور چیز پلوادی پھر اس کی عصمت ریزی کی۔

بتایا جاتا ہے کہ بوائے فرینڈ کی دعوت پر انڈر گریجویٹ طالبہ‘ آرمور سے نظام آباد پہونچی تھی۔ سوشل میڈیا پر اس کی دوستی لڑکے سے ہوئی تھی اس نے اپنی سالگرہ پارٹی کیلئے لڑکی کو مدعو کیا تھا۔ نوجوان نے اپنی بائک پر لڑکی کو ٹاؤن گھمایا تھا بعدازاں اس نے لڑکی کو ویران عمارت لے گیا جہاں وہ اور اس کے دوستوں نے عصمت ریزی کی۔

نمائندہ منصف کے مطابق پولیس کمشنر نظام آباد نے آج بتایا کہ 29ستمبرکی رات تقریباً ایک بجے ون ٹاؤن پولیس اسٹیشن کو ایک ڈائل 100 کال موصول ہوئی جس پر فوری کاروائی کرتے ہوئے ون ٹاؤن پولیس خانگی دواخانہ تروملا پہونچی۔

دواخانہ میں اس وقت تزئین نو کا کام چل رہا ہے تھا جہاں پولیس نے ایک 18سالہ نوجوان خاتون کو دیکھا جس کی صحت بہتر نہیں تھی پولیس نے اسے فوری طور پر سرکاری دواخانہ منتقل کیا۔ لڑکی بیان دینے کے قابل نہیں تھی لڑکی کی صحت بہتر ہونے کے بعد لڑکی کو جی جی ایچ نظام آباد سنٹر لے جایا گیا۔

پوچھ تاچھ پر متاثرہ لڑکی نے بتایا کہ 28 / ستمبر کو وہ نظام آباد میں ڈی نوین کمار نامی ایک شخص سے ملی جس سے اس کی جان پہچان ہے اس کے بعد تین دیگر افراد جو نوین کے دوست بتائے جاتے ہیں‘ ان کے ساتھ شامل ہوئے اور وہ سب نظام آباد سے روانہ ہوئے اور انکاپور گئے جہاں انہوں نے کھانا کھایا اور اس کے بعد شراب پی۔

اس کے بعد مذکورہ بالا تمام افراد اسے ایک پرائیویٹ ہسپتال کے کمرے میں لے گئے جہاں تزین نو کے کام جاری ہیں۔ بعد ازاں مزید 3 افراد ان میں شامل ہوئے۔ لڑکی نشہ کی حالت میں تھی جس کا فائدہ اٹھایا اور اس پر جنسی حملہ کیا گیا۔

اس نے اپنا بیان لیڈی پولیس آفیسر کو دیا لڑکی کے بیان پر مقدمہ درج کیا گیا۔ کمشنر پولیس نے بتایا کہ تمام 6 ملزمان کو29 ستمبر کی رات گرفتار کیا گیا تھا اور انہیں آج عدالت میں پیش کیا گیا ہے۔

گرفتار ملزمین کی شناخت ڈی نوین کمار‘گنجی شنکر‘ٹی بھانو پرکاش‘سری گادھا چرن شیخ کریم اور گنگادھر کی حیثیت سے کی گئی ہے.

ذریعہ
منصف نیوز بیوروآئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.