ورنگل میں بھائی کے ہاتھوں بھائی اور 2 رشتہ داروں کا قتل

پولیس نے بتایا کہ اس واقعہ میں خاندان کے دیگر2 افراد زخمی ہوگئے۔ محمد شفیع، دیگر 4یا5افراد کے ساتھ دروازہ توڑ کر اپنے بڑے بھائی محمد چاند پاشاہ کے مکان میں آج الصبح داخل ہوا اور شفیع نے دیگر افراد کے ساتھ اپنے بھائی ا ور گھر میں مقیم افراد میں درانتیوں اور چاقوؤں سے حملہ کردیا۔

حیدرآباد/ ورنگل: ورنگل ٹاؤن میں ایک خاندان کے 3 افراد کے قتل کی اندوہناک واردات پیش آئی۔ جائیداد و املاک کے تنازعہ پر بھائی نے اپنے ہی بھائی اور دیگر 2 رشتہ داروں کا بیدردی کے ساتھ قتل کردیا۔

قتل کا اندوہناک واقعہ چہارشنبہ کے روز ورنگل شہر کے ایل بی نگر علاقہ میں پیش آیا۔

پولیس نے بتایا کہ اس واقعہ میں خاندان کے دیگر2 افراد زخمی ہوگئے۔ محمد شفیع، دیگر 4یا5افراد کے ساتھ دروازہ توڑ کر اپنے بڑے بھائی محمد چاند پاشاہ کے مکان میں آج الصبح داخل ہوا اور شفیع نے دیگر افراد کے ساتھ اپنے بھائی ا ور گھر میں مقیم افراد میں درانتیوں اور چاقوؤں سے حملہ کردیا۔

اس حملہ میں 50سالہ چاند باشاہ، 42 سالہ ان کی بیوی صابرہ اور صابرہ کا بھائی 40سالہ خلیل ہلاک ہوگئے جبکہ چاند پاشاہ کے2بیٹے20 سالہ فہد اور 24سالہ صمد زخمی ہوگئے۔

چاند پاشاہ کی بیٹی روبینہ جو عینی شاہد ہے، نے بتایا کہ شفیع اور دیگر نامعلوم افراد نے میرے والدین اور دیگر رشتہ داروں پر حملہ کردیا ہے۔ ورنگل پولیس کمشنر ترون جوشی جنہوں نے جرم کے مقام کا دورہ کیا، نے صحافیوں کو بتایا کہ مفرور قاتلوں کو پکڑنے کیلئے خصوصی ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں۔

پولیس عہدیدار نے بتایا کہ ایسا لکتا ہے کہ دونوں بھائیوں کے درمیان جائیداد تنازعہ، اس قتل کی واردات کا اہم سبب ہوسکتا ہے۔ یہ دونوں بھائی مویشیوں کے تاجر بتائے گئے ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ ایک کروڑ روپے کے منافع کی تقسیم کے مسئلہ پر دونوں بھائیوں میں تنازعہ چل رہا تھا۔

منافع کی عدم تقسیم پر شفیع برہم تھا اس لئے اُس نے قتل کی منصوبہ بندی کی۔ حملہ آوروں نے صابرہ کے بھائی کا بھی قتل کردیا جو اپنی بہن کو دیکھنے یہاں آیا ہوا تھا۔ حملہ آوروں کو روکنے کی کوشش کے دوران وہ مارا گیا۔ زخمیوں جن کی حالت تشویشناک بتائی گئی ہے، میں سے ایک کو بہتر علاج کیلئے حیدرآباد منتقل کردیا گیا۔

نمائندہ منصف ورنگل کے مطابق ورنگل میں تین تا چار بجے شب (صبح کی اولین ساعتوں) کے دوران شفیع نامی شخص نے اپنے 9ساتھیوں (جو رشتہ دار تھے)کے ساتھ چاندپاشاہ کے مکان ایل بی نگر پہنچ کر دروازہ کھٹکھٹایا لیکن دروازہ نہ کھولنے پر اس نے کٹر کی مدد سے دروازہ کاٹ کر اندر داخل ہوا۔

گھر میں محو خواب50 سالہ چاند پاشاہ، 42 سالہ ان کی اہلیہ صابرہ بیگم اور 40سالہ خلیل اور دیگر رشتہ داروں پر حملہ کردیا تاہم یہ تینوں چاند پاشاہ، صابرہ اور خلیل ہلاک ہوگئے۔نعشیں خون میں لت پت پائی گئیں جبکہ اس حملہ میں چاند پاشاہ کا بیٹے ناہید اور سمیر شدید زخمی ہوگئے۔شفیع کی جانب سے اس کے افراد خاندان کا بہیمانہ قتل کئے جانے کی اطلاع مقتول چاند پاشاہ کی بیٹی روبینہ نے پولیس کو دی۔

اے سی پی ورنگل گیری کمار،سی آئی اور ایس آئیز نے جائے مقام کا معائنہ کیا۔ایک مقدمہ درج کرتے ہوئے نعشوں کو پوسٹ مارٹم کے لئے ایم جی ایم ہاسپٹل کے مردہ خانہ منتقل کیا۔اس ضمن میں رکن اسمبلی ورنگل این نریندر،ریاستی ٹی آر ایس قائد ایرابیلی پردیپ راؤ (ریاستی وزیر پنچایت راج ای دیا کر راؤ کے بھائی) نے ایم جی ایم ہاسپٹل پہنچ کر نعشوں کا دیدار اور کیا زخمی افراد سے ملاقات کی اور افراد خاندان کو پرسہ دیا۔

اس موقع پر انہوں نے ڈاکٹرس سے مکمل جانکاری حاصل کی۔زخمی افراد کو اپنی جانب سے بہترین طبی خدمات کی فراہمی کے اقدامات کرنے کا تیقن دیا اور اگر حیدر آبادلے جانے کی ضرورت پڑی تو وہ ہاسپٹل کے مالک اور حکومت سے بات چیت کریں گے۔

انہوں نے اس واقعہ کی پرزور مذمت کی اور پولیس حکام مستقبل میں اس طرح کے گھناؤنے جرائم کے تدارک کے اقدامات کی خواہش کی۔اس موقع پر ٹی آر ایس کے سینئر قائد سید مسعود،کارپوریٹر کمار سوامی،کارپوریٹر محمد فرقان،محمد احمدخان،سمپت کے علاوہ دیگر موجود تھے۔

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.