کانگریس قائدین کا اجلاس، ایک دوسرے پر الزامات

اجلاس میں سابق ایم پی کریم نگر پونم پربھاکر نے سابق صدر ٹی پی سی سی، و ایم پی این اتم کمار ریڈی کے خلاف سنسنی خیز ریمارکس کئے۔

حیدرآباد: حلقہ اسمبلی حضور آباد کے ضمنی الیکشن میں ذلت آمیز شکست کا غم، کانگریس میں ہنوز برقرار ہے۔

کانگریس ہائی کمان نے پردیش کانگریس کے قائدین کا ایک اجلاس طلب کیا جس میں ضمنی الیکشن میں پارٹی کی ناکامی کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں سابق ایم پی کریم نگر پونم پربھاکر نے سابق صدر ٹی پی سی سی، و ایم پی این اتم کمار ریڈی کے خلاف سنسنی خیز ریمارکس کئے۔

پونم پربھاکر نے اس اجلاس میں کہا کہ تال میل کے فقدان کے سبب ضمنی الیکشن میں کانگریس کو ذلت آمیز شکست ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دو سابق صدور پردیش کانگریس ڈاکٹر کے کیشو راؤ اور ڈی سرینواس نے ٹی آر ایس ٹکٹ سے راجیہ سبھا کارکن بننے کیلئے کانگریس سے دغا بازی کی۔ سابق صدر ٹی پی سی سی این اتم کمار ریڈی کے چچازاد بھائی کوشک ریڈی نے بھی کانگریس کو دھوکہ دیا۔

ایم ایل سی بننے کے لالچ میں کوشک ریڈی نے کانگریس سے وفاداری تبدیل کرتے ہوئے ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کرلی۔ اگر ایسا ہی چلتا رہا تو پھر کانگریس کا آئندہ انتخابات میں بھی صفایا ہوسکتا ہے۔پونم پربھا کر نے چیالنج کیا کہ انہیں پارٹی سے معطل کرکے دکھائیں۔

انہوں نے کہا کہ ضمنی الیکشن کے انچارج کے طور پر میرے خلاف کئی الزامات عائد کئے گئے جبکہ ان الزامات کی کوئی حقیقت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پردیش کانگریس میں حالات صحیح نہیں ہیں۔ ہمارے چند قائدین ہی عوام میں مقبول قائد کو دوسری پارٹی میں جانے کی ترغیب دے رہے ہیں۔

اس دوران وینوگوپال کے ریمارک پر سی ایل پی قائد ملو بھٹی وکرامارکہ نے سخت اعتراض کیا۔ گوپال نے کہا کہ اگر ایٹالہ راجندر کانگریس میں شامل ہوتے تو حالات مختلف ہوتے جس پر بھٹی وکرامارکہ نے کہا کہ سر! گوپال جی، آپ نے ہی ای راجندر کو کانگریس میں نہ لینے کا مشورہ دیا تھا۔ سی ایل پی قائد نے کہا کہ اپنی ناکامیوں کا ٹھیکرا پردیش کانگریس پر پھوڑ نے کی کوشش کی جارہی ہے جو غلط ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.