تلنگانہ آر ٹی سی کو خانگیانے کا کوئی ارادہ نہیں: حکومت

موجودہ طور پر ادارہ اپنے ملازمین کو تنخواہیں جاری کرنے کے موقف میں بھی نہیں ہے۔ اس تناظر میں آر ٹی سی کے نئے صدرنشین باجی ریڈی گووردھن کی جانب سے جاری کردہ بیان کہ چیف منسٹر نے آر ٹی سی کے مالیہ میں بہتری لانے کیلئے چار ماہ کی مہلت دی ہے۔

حیدرآباد: مالی بحران سے دوچار تلنگانہ اسٹیٹ روڈ ٹرانسپورٹ کارپوریشن(ٹی ایس آرٹی سی)کو خانگیانے کے متعلق جاری افواہوں کے درمیان حکومت کی جانب سے یہ وضاحت کی گئی ہے کہ آر ٹی سی کو خانگیانے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق آر ٹی سی کی آمدنی میں اضافہ کرتے ہوئے ادارہ کو فعال وکارکرد بنانے کی کوشش کی جائے گی۔ اس کے لئے شرح ٹکٹ میں اضافہ اور آر ٹی سی جائیدادوں کو لیز پر دیا جاسکتا ہے۔

واضح رہے کہ حضور آباد ضمنی انتخابات کے پیش نظر ٹی آر ایس قائدین، بی جے پی پرسرکاری املاک کو خانگی اداروں کے حوالہ کرنے کی پالیسی پر شدید تنقید کررہے ہیں۔ ایسے میں ٹی آر ایس کا آر ٹی سی کو خانگی کمپنیوں کے حوالہ کرنے کے متعلق سوچا بھی نہیں جاسکتا۔

گذشتہ دنوں چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ اور آر ٹی سی کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ ہوئے جائزہ اجلاس میں حالیہ عرصہ کے دوران کورونا وباء، ڈیزل اور پٹرول و اسپیئرپارٹس کی قیمتوں میں اضافہ کی وجہ سے مالی بحران کا شکار آر ٹی سی کو دوبارہ فائدے میں لانے کیلئے مختلف امور پر غور وخوص کیا گیا تھا۔

موجودہ طور پر ادارہ اپنے ملازمین کو تنخواہیں جاری کرنے کے موقف میں بھی نہیں ہے۔ اس تناظر میں آر ٹی سی کے نئے صدرنشین باجی ریڈی گووردھن کی جانب سے جاری کردہ بیان کہ چیف منسٹر نے آر ٹی سی کے مالیہ میں بہتری لانے کیلئے چار ماہ کی مہلت دی ہے۔

ان کے اس بیان کے بعد قیاس آرائیوں کا بازار گرم ہوگیا اگرچہ کہ اس ضمن میں سی ایم او کی جانب سے کوئی اشارہ نہیں دیا گیا ہے مگر اس تناظر میں حکومت، ادارہ کے مالی موقف میں بہتری لانے کیلئے آر ٹی سی کی اراضیات کی فروخت یا لیز پر دے سکتی ہے۔ اطلاعات کے مطابق آر ٹی سی کے پاس سابق دس اضلاع میں 1400 ایکر اراضی،97 بس ڈپوز،364 بس اسٹیشن ہیں جن کی مالیت70کروڑ بتائی جارہی ہے۔ جبکہ آر ٹی سی پر 5600کروڑ کا قرض ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.