دلت بندھو اسکیم ضمنی انتخاب جیتنے کیلئے نہیں لائی گئی: کے سی آر

چیف منسٹر نے کہا کہ آنے والے بجٹ میں دلت بندھو اسکیم کیلئے 20ہزار کروڑ روپئے مختص کئے جائیں گے۔ ہر 100اسمبلی حلقوں میں 10دلت خاندانوں کو منتخب کیا جائے گا۔

حیدرآباد: چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے کہا ہے کہ دلت بندھو اسکیم (جس کے تحت درج فہرست ذاتوں سے تعلق رکھنے والے ہر خاندان کو 10لاکھ روپئے دئیے جائیں گے) حضور آباد ضمنی انتخاب جیتنے کے مقصد سے شروع نہیں کی گئی ہے۔ وہ دلت بندھو پر ایوان میں مختصر مباحث کا جواب دے رہے تھے۔ انہوں نے اپوزیشن جماعتوں پر سیاسی نقطہ نظر سے بولنے کا الزام لگایا۔

 انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں دلتوں کی حالت ابتر ہے۔ یہ کچلے ہوئے لوگ بااختیار نہیں ہیں۔ ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر‘ دلتوں کیلئے جو کچھ کرسکتے تھے انہوں نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر امبیڈکر کے طرز فکر پر اب ملک بھر میں مباحث ہورہے ہیں۔ چیف منسٹر نے کانگریس کے بارے میں تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ یہ نہیں کہیں گے کہ کانگریس نے دلتوں کے ساتھ کیا کیا ہے۔ وہ جو کچھ کرسکتے تھے انہوں نے کیا ہے۔ اگر کانگریس ایسا نہ کرتی تو بی جے پی برسر اقتدار نہ آتی۔

 انہوں نے کانگریس پارٹی سے سوال کیا کہ کیا انہیں یہ نہیں معلوم کہ انتخابات کب منعقد ہوں گے۔ کیا یہ سیاسی جماعت نہیں ہے۔ چیف منسٹر نے  کہا کہ مرکزی حکومت دلتوں کیلئے تحفظات کا فیصد بڑھانے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ آخر مرکزی حکومت پسماندہ طبقات کی مردم شماری کیوں نہیں کر وارہی ہے۔ مرکز نے سپریم کورٹ میں حلفنامہ بھی داخل کیا ہے۔

 انہوں نے وزیراعظم سے کئی مرتبہ درخواست کی ہے کہ وہ درج فہرست ذاتوں کی زمرہ بندی کرائیں۔ چیف منسٹر نے کہا کہ آنے والے بجٹ میں دلت بندھو اسکیم کیلئے 20ہزار کروڑ روپئے مختص کئے جائیں گے۔ ہر 100اسمبلی حلقوں میں 10دلت خاندانوں کو منتخب کیا جائے گا۔ دلت استفادہ کنندگان کا انتخاب رکن اسمبلی کے حوالے کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ استفادہ کنندگان کو 10لاکھ روپئے دئیے جائیں گے جس سے وہ جہاں چاہے کاروبار کرسکتے ہیں اور جس پر حکومت کو کوئی اعتراض نہیں۔ تلنگانہ میں اراضی کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں اور کہیں بھی 20لاکھ روپئے ایکڑ سے کم قیمت پر اراضی دستیاب نہیں ہے۔

چیف منسٹر نے اس بات کو دہرایا کہ آنے والے دو تین مہینوں میں تقررات کا عمل شروع ہوگا۔ 80ہزار جائیدادوں پر تقررات کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ سیاست میں کبھی بھی کچھ بھی ہوسکتا ہے۔ ٹی آر ایس‘ مرکز میں بھی برسر اقتدار آسکتی ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.