راہول گاندھی کے ساتھ ایمس میں ڈرگ ٹسٹ کرانے تیار ہوں: کے ٹی آر

کے ٹی آر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر اے ریونت ریڈی کے اس چیالنج کا جواب دے رہے تھے جس میں انہوں نے کے ٹی آر کو منشیات کا ٹسٹ کرانے کیلئے کہا تھا۔ راما راؤ نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ میں کوئی بھی ٹسٹ کرانے کیلئے تیار ہوں۔

حیدرآباد: حکمراں جماعت ٹی آر ایس کے کارگذار صدر اور وزیر برائے بلدی نظم ونسق وشہری ترقی‘ آئی ٹی انڈسٹریز کے ٹی راما راؤ نے ریاست کی اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے جھوٹے پروپگنڈہ اور شخصی رسواکن مہم کے خلاف قانونی کارروائی شروع کی ہے اور عدالت میں ہتک عزت کا مقدمہ دائر کرتے ہوئے انجنکشن آرڈر جاری کرنے کی گذارش کی ہے۔

تارک راما راؤ نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ میں نے قانونی کارروائی شروع کی ہے اور معزز ہائیکورٹ میں ہتک عزت وانجنکشن کیلئے مقدمہ دائر کیا ہے۔ مجھے پورا یقین ہے کہ عدالتی کارروائی میرے خلاف پھیلائی جانے والی انتقامی اور جھوٹی افواہوں کا خاتمہ کردے گی اور خاطیوں کو کیفر کردار تک پہنچایا جاسکے گا۔

ٹی آر ایس کے کارگذار صدر نے اس بات پر آمادگی ظاہر کی کہ اگر اے آئی سی سی کے سابق صدر راہول گاندھی بھی ان کے ساتھ منشیات کا ٹسٹ کرانے تیار ہیں تو وہ کوئی بھی ٹسٹ کرانے حتیٰ کہ دہلی میں آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسس کا سفر کرنے کیلئے بھی تیار ہیں۔

 وہ تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر اے ریونت ریڈی کے اس چیالنج کا جواب دے رہے تھے جس میں انہوں نے کے ٹی آر کو منشیات کا ٹسٹ کرانے کیلئے کہا تھا۔ راما راؤ نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ میں کوئی بھی ٹسٹ کرانے کیلئے تیار ہوں اور اگر راہول گاندھی بھی میرے ساتھ شامل ہوجائیں تو میں ایمس‘ دہلی کو جانے کیلئے بھی تیار ہوں۔ چرلہ پلی جیل کے سابق قیدی کے ساتھ یہ ٹسٹ کرانا میرے وقار کے خلاف ہے۔

انہوں نے ریونت ریڈی سے سوال کیا کہ اگر وہ اپنا ٹسٹ کراتے ہیں اور انہیں کلین چٹ مل جاتی ہے تو کیا ریونت ریڈی معافی مانگ لیں گے اور اپنے عہدوں سے مستعفیٰ ہوجائیں گے۔ انہوں نے سوال کیا کہ آیا پی پی سی صدرنوٹ برائے ووٹ کیس میں لائی ڈٹیکٹر ٹسٹ کرانے تیار ہیں؟ ۔

یہاں یہ تذکرہ مناسب ہوگا کہ قبل ازیں ریونت ریڈی نے کے ٹی آر کو چیالنج کیا تھا کہ وہ ان کے اور سابق رکن پارلیمنٹ کونڈا وشویشور ریڈی کے ساتھ اپنا ڈرگ ٹسٹ کرائیں۔ انہوں نے یہ چیالنج اس لئے کیا تھا تاکہ ملک کے نوجوانوں میں منشیات کی لعنت کے خلاف بیداری پیدا کی جاسکے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.