وقف اراضیات پر قبضے، سی بی آئی تحقیقات ضروری: اکبرالدین اویسی

کئی دہائیوں سے ان کی پارٹی، وقف اراضیات پر غیر مجاز قبضوں کا مسئلہ اٹھاتی آرہی ہے مگر موجودہ ٹی آر ایس حکومت بشمول کسی بھی حکومت نے اس مسئلہ کو سنجیدگی سے نہیں لیا ہے۔ اکبراویسی نے کہا کہ وقف اراضیات پر50 فیصد قبضے، سرکاری اداروں کے ہے۔

حیدرآباد: اسپیکر اسمبلی پوچارم سرینواس ریڈی نے اس بات کا تیقن دیا کہ وہ وقف اراضیات پر غیر مجاز قبضوں کے مسئلہ سے چیف منسٹر کے سی آر کو واقف کرائیں گے تاکہ اس مسئلہ پر کوئی فیصلہ لے سکیں۔ اسمبلی میں آج وقفہ صفر کے دوران مجلسی فلور لیڈر اکبر الدین اویسی نے وقف اراضیات پر قبضوں کا مسئلہ اٹھایا اور ان قبضوں کی سی بی آئی، سی بی سی آئی ٹی یا ہائی کورٹ کے برسر خدمت جج کے ذریعہ تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

 کئی دہائیوں سے ان کی پارٹی، وقف اراضیات پر غیر مجاز قبضوں کا مسئلہ اٹھاتی آرہی ہے مگر موجودہ ٹی آر ایس حکومت بشمول کسی بھی حکومت نے اس مسئلہ کو سنجیدگی سے نہیں لیا ہے۔ اکبر الدین اویسی نے کہا کہ وقف کی اراضیات پر50 فیصد قبضے، سرکاری اداروں نے کررکھے ہیں۔

 حیدرآباد انٹرنیشنل ایر پورٹ، کئی  آئی ٹی کمپنیوں کے بشمول بڑی کمپنیاں، وقف اراضیات پر قابض ہیں۔اویسی نے کہا کہ کرائے گئے سروے کے مطابق33,929 وقف اداروں کی 77538 ایکڑ اراضیات کے منجملہ57,424 اراضیات پر قبضہ کئے گئے ہیں جن کا تناسب74 فیصد ہوتا ہے۔ صرف ضلع میدک میں 99فیصد وقف اراضیات پر قبضہ کرلئے گئے۔

 انہوں نے کہا کہ اگر ان اراضیات کا تحفظ کرلیا جائے تو پھر حکومت کو مسلمانوں کو وظائف اور دیگر اسکیمات کیلئے فنڈس فراہم کرنے کی ضرورت نہیں رہیگی۔ ان وقف اراضیات سے حاصل ہونے والی آمدنی سے تمام مسلم استفادہ کنند گان کو مستفید کرایا جاسکتا ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.