این سی بی کے ارادے نیک نہیں: نواب ملک

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ملک نے یہ بھی کہا کہ ان کے داماد سمیر خان جنہیں 9 ماہ بعد ڈرگس کیس میں حال ہی میں ضمانت ملی ہے، اب این سی بی کے الزامات کو رد کروانے ہائی کورٹ سے رجوع ہوں گے۔

ممبئی: این سی بی کی جانب سے حالیہ دھاوؤں کے پس منظر میں جن کی زد میں مشہور شخصیات بھی آئیں، ریاستی وزیر اور این سی پی کے ترجمان نواب ملک نے الزام عائد کیا کہ مخالف منشیات ایجنسی کے ”ارادے نیک نہیں ہیں“ اور لوگوں کو پھنسانے ”چنندہ افشاء“ کررہی ہے۔

یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ملک نے یہ بھی کہا کہ ان کے داماد سمیر خان جنہیں 9 ماہ بعد ڈرگس کیس میں حال ہی میں ضمانت ملی ہے، اب این سی بی کے الزامات کو رد کروانے ہائی کورٹ سے رجوع ہوں گے۔

این سی بی نے خان کو رواں سال جنوری میں مبینہ ڈرگ کیس میں گرفتار کیا تھا۔ ممبئی کے سمندر میں کروز جہاز پر دھاؤوں کے علاوہ این سی بی نے گزشتہ سال اداکار سشانت سنگھ راجپوت کی موت سے متعلق ڈرگ کیس اور دیگر کئی مشہور شخصیات کی تحقیقات کی تھیں۔

گزشتہ ہفتہ ملک نے الزام عائد کیا کہ 2/ اکتوبر کو ممبئی کے ساحل سے دور کروز جہاز میں این سی بی کا دھاوا فرضی تھا جس کے دوران کوئی منشیات نہیں پائی گئی تھیں۔

چہارشنبہ کو وزیر نے الزام عائد کیا کہ این سی بی کے ارادے برے ہیں اور لوگوں کو پھنسانے چنندہ افشاء میں ملوث ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ این سی بی تحقیقات پر شبہات کے اظہار کے بعد انہیں دھمکیاں مل رہی ہیں جس کے بعد ان کی سیکورٹی میں اضافہ کردیا گیا۔

ان کے داماد سمیر خان کے کیس میں این ڈی پی ایس عدالت کی جانب سے عطا کردہ ضمانت کا حوالہ دیتے ہوئے ملک نے کہا کہ بادی النظر میں ڈرگ سنڈیکیٹ کا کوئی ثبوت نہیں تھا۔“

این سی پی لیڈر نے کہا کہ یہ حیرت انگیز ہے کہ این سی بی جیسی ایجنسی این ڈی پی ایس قانون کے تحت آنے والی منشیات اور تمباکو سے متعلق اشیاء میں تمیز نہیں کرسکتی۔“ این سی پی لیڈر نے کہا کہ اس نے ”(این سی بی) نے کہا کہ سمیر خان کے کیس میں گانجہ ضبط کیا گیا مگر کوئی گانجہ نہیں تھا۔

انہیں ضمانت ملنے کے بعد آج مجھے وضاحت کرنا تھا، کیوں کہ کروز ڈرگ پارٹی کے این سی بی کے فرضی کیس پر سوالات اٹھانے کے بعد سے بی جے پی مجھے اور میرے داماد کو نشانہ بنارہی ہے۔“ ملک نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ ان کا خاندان این بی سی کی وجہ سے صدمہ اور بدنامی سے گزررہا ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.