کروز پارٹی منتظین نے مرکز سے راست اجازت لی: نواب ملک

نواب ملک نے کہا کہ اگر میرے دعوے سچے ہیں تو سمیر وانکھیڈے کو کم ازکم مجھ سے اور میرے خاندان سے معافی مانگنی چاہئے۔ اس کی نوکری جانا یقینی ہے۔

ممبئی: مہاراشٹرا کے وزیر اور این سی پی قائد نواب ملک نے چہارشنبہ کے دن دعویٰ کیا کہ کورڈیلیا کروز ڈرگس پارٹی کے منتظمین نے مرکز کی نظامت جہازرانی (ڈائرکٹوریٹ آف شپنگ) سے اجازت راست لی تھی۔ ریاستی پولیس یا ریاستی محکمہ داخلہ سے اجازت نہیں لی گئی۔

ممبئی میں میڈیا سے بات چیت میں نواب ملک نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ اُس وقت کروز جہاز میں بین الاقوامی ڈرگس مافیا کا ایک رکن موجود تھا۔ انہوں نے سوال کیا کہ وہ کیسے آزاد ہے جبکہ دیگر لوگ گرفتار کرلئے گئے۔

نواب ملک نے یہ بھی کہا کہ نارکوٹکس کنٹرول بیوروممبئی زونل ڈائرکٹر سمیر وانکھیڈے کا جو برتھ سرٹیفکیٹ انہوں نے آن لائن پوسٹ کیا ہے اگر وہ جھوٹا ثابت ہوجائے تو وہ اپنی وزارت چھوڑدیں گے اور سیاست سے سبکدوش ہوجائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے حیرت ہوتی ہے کہ جب میں سمیر وانکھیڈے کو بے نقاب کرنے کی کوشش کرتا ہوں تو پتہ نہیں بی جے پی قائدین کو کیوں تکلیف ہوتی ہے۔

چہارشنبہ کو مہاراشٹرا کے وزیر نے کہا کہ کورڈیلیا کروز ڈرگس پارٹی کے منتظمین فیشن ٹی وی نے مہاراشٹرا پولیس یا ریاستی محکمہ داخلہ سے کوئی اجازت نہیں لی۔ انہوں نے راست اجازت ڈائرکٹوریٹ آف شپنگ سے لی جو مرکزی وزارت بندرگاہیں‘ جہاز رانی اور آبی گزرگاہیں کے تحت آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میرا ماننا ہے کہ این سی بی عہدیداروں کی اعلیٰ کمیٹی دہلی سے ممبئی پہنچ چکی ہے۔

 اسے چاہئے کہ وہ سمیر وانکھیڈے‘ گواہوں کے پی گوساوی‘ پربھاکر سائل اور وانکھیڈے کے ڈرائیور مانے کے نجی فونس کا سی ڈی آر (کال ڈیٹیل ریکارڈ) کی جانچ کرے۔آپ کو بیانات ریکارڈ کرنے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔ فون کال خود بہت کچھ بیان کردیتی ہے۔نواب ملک نے کہا کہ اُس دن کروزجہاز میں بین الاقوامی ڈرگ مافیا کا ایک رکن موجود تھا۔ پارٹی کی بعض ویڈیوز میں اس داڑھی والے شخص کو دیکھا جاسکتا ہے۔

 مجھے بتایا گیا ہے کہ یہ شخص ماضی میں دہلی کی تہاڑ جیل اور راجستھان کی ایک جیل میں رہ چکا ہے۔ این سی بی کی دہلی ٹیم کو کروز جہاز کے سی سی ٹی وی کیمروں کی جانچ کرنی چاہئے۔ این سی پی ترجمان نے سوال کیا کہ کیسے چند لوگوں کو گرفتار کیا جاسکتا ہے جبکہ بین الاقوامی سطح کا ڈرگ مافیا آزاد گھوم رہا ہے۔ نواب ملک نے کہا کہ اگر میرے دعوے سچے ہیں تو سمیر وانکھیڈے کو کم ازکم مجھ سے اور میرے خاندان سے معافی مانگنی چاہئے۔ اس کی نوکری جانا یقینی ہے۔

مہاراشٹرا کے وزیر نے کہا کہ وہ این سی بی کے اعلیٰ عہدیداروں کو سراغ دے رہے ہیں جس کی تحقیقات کی جانی چاہئیں۔ انہیں پتہ چلانا چاہئے کہ سمیر وانکھیڈے کے دوست کون ہیں اور وہ منشیات کے ڈیلر سام ڈیسوزا سے کیسے جڑا۔ سمیر وانکھیڈے کی شادی کے تعلق سے نواب ملک نے کہا کہ 7  دسمبر 2006 کو لوکھنڈوالا کامپلکس میں یہ شادی ہوئی تھی۔ شادی کے رجسٹریشن میں واضح ہے کہ اس کے باپ کا نام داؤد ہے اور سمیر مسلمان ہے۔ ایک گواہ کا نام عزیز خان ہے جو سمیر وانکھیڈے کی بڑی بہن یاسمین داؤد وانکھیڈے کاشوہر ہے۔

ذریعہ
پی ٹی آئی

تبصرہ کریں

یہ بھی دیکھیں
بند کریں
Back to top button

Adblocker Detected

Please turn off your Adblocker to continue using our service.